بھارت میں بغاوت،نئی دہلی سمیت کئی ریاستوں کا قانون کے نفاذ سے انکار

بھارت میں بغاوت،نئی دہلی سمیت کئی ریاستوں کا قانون کے نفاذ سے انکار

  



نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) مسلم مخالف بل پر بھارت میں بغاوت ہوگئی، نئی دہلی سمیت مغربی بنگال، مشرقی پنجاب، کیرالا، مدھیا پردیش اور دیگر ریاستوں نے قانون نافذ کرنے سے انکار کردیا،مشتعل مظاہرین نے توڑ پھوڑ جلاؤ گھیراؤ کیا۔ پولیس سے چھڑپوں میں درجنوں افراد زخمی ہوئے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی صدر رام کوند نے شہریت کے بل پر دستخط کرنے کے بعد مسلم مخالف بل پر بھارت میں بغاوت ہو گئی، نئی دہلی کی جانب سے قانون نافذ کرنے سے انکار پر مغربی بنگال، مشرقی پنجاب، کیرالا، مدھیا پردیش اور دیگر ریاستوں نے بھی متناز ع بل کو نافذ کرنے سے انکارکردیا۔راہول گاندھی نے بل کو ریپ ان انڈیا قرار دیدیا جس پر بھارتی پارلیمنٹ میں ہنگامہ آرائی ہوئی ارا کین نے معافی کا مطالبہ کردیا۔ راہول گاندھی نے معافی مانگنے سے انکار کرتے ہوئے کہا مودی شمال مشرق کو جلانے اور معیشت کو تباہ کر نے پر معافی مانگیں۔بل کیخلاف آسام، امرتسر، کیرالہ سمیت شمال مشر قی ریاستوں میں مظاہروں نے شدت اختیار کرلی ہے۔ مشتعل مظا ہر ین نے توڑ پھوڑ جلاؤ گھیراؤ کیا۔ پولیس سے جھڑپوں میں درجنوں افرا د زخمی ہوئے۔اقوام متحدہ کے انسانی حقوق ادارے نے قانون کو امتیا ز ی قرار دیدیا ہے،جبکہ جاپانی وزیراعظم اور بنگلادیشی وزیرخارجہ نے دورہ بھارت منسوخ کردیے۔دوسری جانب امریکہ نے اپنے شہریوں کیلئے ٹریول الرٹ جاری کرتے ہوئے شہریوں کو بھارت جانے سے خبردار کردیا۔دوسری جانب اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر انسانی حقو ق نے بھارت کے اس متنازعہ قانون پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔جریمی لارنس کہتی ہیں بل میں مسلم مہاجرین کوتحفظ نہیں دیا گیا، تمام مہاجر ین احترام، تحفظ اور انسانی حقوق کے مستحق ہیں، ترمیمی قانو ن سے بھارتی آئین میں موجود قانونی مساوات کونقصان پہنچے گا۔

بھارت بغاوت

مزید : صفحہ اول