”اگر ججوں نے وکلاءکے بغیر فیصلے کرنا شروع کردیئے تو ۔۔۔“تجزیہ کار سلیم بخاری نے قانون دان برادری کو خبردارکردیا

”اگر ججوں نے وکلاءکے بغیر فیصلے کرنا شروع کردیئے تو ۔۔۔“تجزیہ کار سلیم ...
”اگر ججوں نے وکلاءکے بغیر فیصلے کرنا شروع کردیئے تو ۔۔۔“تجزیہ کار سلیم بخاری نے قانون دان برادری کو خبردارکردیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)تجزیہ کار سلیم بخاری نے کہاہے کہ اگر وکلا عدالتوں میں نہیں جائیں گے اور ججوں نے وکلاءکے بغیر فیصلے کرنا شروع کردیئے تو ایک عجیب وغریب قسم کی فضاءقائم ہوجائے گی جس سے ہم نے بچناہے ۔

نجی نیوزچینل 92نیوز کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے سلیم بخاری نے کہا کہ کبھی آپ نے سنا تھا کہ عدالتوں کوتالے لگ جائیں گے اور ہسپتال پرحملہ ہوگا ، یہ ہم کس معاشرے میں رہ رہے ہیں؟انہوں نے کہا کہ جن لوگوں کو ہم سمجھتے ہیں کہ وہ لوگوں کے حقوق کے محافظ ہیں ، وہ اس حد تک چلے جائیں گے !

سلیم بخاری کا کہنا تھاکہ اگر وکلا عدالتوں میں نہیں جائیں گے اور ججوں نے وکلاءکے بغیر فیصلے کرنا شروع کردیئے تو ایک عجیب وغریب قسم کی فضاءقائم ہوجائے گی جس سے ہم نے بچناہے ۔انہوں نے کہاکہ میڈیااپنے پاس سے کچھ نہیں بناتا ، ہم نے ڈاکٹروں کو نہیں کہا تھاکہ یہ مسیحاکی بجائے موت کے فرشتے بن گئے ہیں جب ڈاکٹروں نے ہڑتا ل کی تھی ۔

مزید : قومی


loading...