مرید کے :زندگی کی قیمت صرف 30روپے ،بھتہ نہ دینے پر غریب رکشہ ڈرائیور قتل

مرید کے :زندگی کی قیمت صرف 30روپے ،بھتہ نہ دینے پر غریب رکشہ ڈرائیور قتل

  

شیخوپورہ،مریدکے(بیورورپورٹ،نامہ نگار)تھانہ صدر کے علاقہ ننگل ساہداں میں مبینہ طور پر بھتہ نہ دینے پر با اثر افراد نے فائرنگ کرکے غریب رکشہ ڈرائیور کو قتل کر دیا اور فرار ہو گئے۔ ورثاء اور رکشہ ڈرائیوروں نے مقتول کی نعش جی ٹی روڈ پر رکھ کر ٹریفک معطل کر دی۔ ڈی ایس پی سرکل مریدکے کی یقین دہانی پر ٹریفک کھول دی گئی۔ بتایا گیا ہے کہ افتخار وغیرہ ننگل ساہداں اڈا سے روزانہ رکشہ ڈرائیوروں سے پرچی فیس کے نام پر بھتہ وصول کرتے تھے۔ غریب رکشہ ڈرائیور غلام حیدر عرف گاما نے مبینہ طور پر بھتہ دینے سے انکار کیا جس پر مبینہ ملزمان نے دو روز قبل بھی اس کو پھینٹی لگائی اور گزشتہ روز اپنے ڈیرہ پر طلب کرکے پہلے تشدد کا نشانہ بنایا اور بھاگنے کی کوشش میں اس کے سر میں گولی مار کر موت کی نیند سلا دیا اور فرار ہو گئے۔ اہل علاقہ نے مقتول کی نعش جی ٹی روڈ پر رکھ کر احتجاج کیا اور وزیراعلی پنجاب میاں شہباز شریف کی آمد کا مطالبہ کیا۔ ڈی ایس پی سرکل مریدکے نے موقع پر پہنچ کر مظاہرین کو یقین دلایا کہ ملزمان کو جلد گرفتار کرکے ان سخت سزا دلائی جائے گی اور ننگل ساہداں سمیت دیگر علاقوں سے بھی پرچی فیس کے نام پر بھتہ خوری کا خاتمہ کیا جائے گا۔ مظاہرین نے بتایا کہ سروس بازار حدوکے روڈ سے ایک سو روپے فی رکشہ،ظفر آرکیڈ ، جی ٹی روڈ دربار بابا گاما حیات، مجاہد ہوٹل، پرانا نارنگ روڈ، ریلوے اسٹیشن اور دیگر مقامات سے بھی روزانہ ہزاروں روپے کا بھتہ وصول کیا جا تاہے جبکہ جی ٹی روڈ پر پرچی فیس کے نام پر مسافر گاڑیوں سے بھی جبری فیس وصول کی جا تی ہے جو بے گناہ افراد کی قتل و غارت گری کے لیے استعمال ہو رہی ہے۔ ڈی ایس پی نے تمام اڈوں سے بھتہ خوری کے خاتمہ کا یقین دلایا جس پر انہوں نے ٹریفک بحال کرتے ہوئے مقتول کی نعش پوسٹمارٹم کے لیے ہسپتال پہنچا دی۔

مزید :

صفحہ اول -