سازش کے تحت دینی مدارس کو بند کیا جارہا ہے ،مولانا عرش اللہ

سازش کے تحت دینی مدارس کو بند کیا جارہا ہے ،مولانا عرش اللہ

  

چارسدہ (بیورورپورٹ) ممتاز عالم دین مولانا عرش اللہ نے کہا ہے کہ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت دینی مدارس کو بند کیا جا رہا ہے تاکہ دین اسلام ترویج و اشاعت رک سکے ۔ عصری علوم کے ساتھ ساتھ دینی علوم کی ترویج بھی حکومت کی ذمہ داری ہے مگر حکومت اپنی ذمہ داری پوری کر نے کی بجائے مدارس کو تالے لگا رہے ہیں ۔چارسدہ میں میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے مولانا عرش اللہ نے کہا کہ بد قسمتی سے حکومت قرآن و حدیث کے ترویج و اشاعت میں کوئی دلچسپی نہیں لیتی جس کی وجہ سے مخیر حضرات کے زکواۃ اور امداد سے دینی مدارس چل رہے ہیں۔ آئین پاکستان اور مروجہ قوانین کے مطابق تمام دینی مدارس حکومت کے پاس رجسٹرڈ ہیں اور آئین و قانون کے دائرہ میں رہ کر قرآن و سنت کی تعلیمات پھیلا رہے ہیں ۔ انہوں نے تنگی میں تعلیم القرآن والسنت مدرسہ کی بند ش کو دین اسلام کے خلاف اقدام قرار دیا اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر مدرسہ کھول کر طلباء کا مستقبل بچایا جائے بصورت دیگر جمعیت علمائے اسلام سڑکوں پر نکل آئیگی ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -