بچوں سے زیادتی پر دو گنا سزا کا بل منظور

بچوں سے زیادتی پر دو گنا سزا کا بل منظور

  

قومی اسمبلی نے بچوں سے زیادتی پر 20 سال قید اور دس لاکھ روپے جرمانے کی سزا کا بل منظور کر لیا ہے۔ اب یہ بل سینٹ میں پیش کیا جائے گا، جس کی منظوری کے بعد اسے باقاعدہ قانون کی حیثیت حاصل ہو جائے گی۔ بچوں سے زیادتی پر موجودہ قانون میں سزا کم از کم سات سال اور زیادہ سے زیادہ چودہ سال جبکہ پانچ لاکھ روپے تک جرمانہ کیا جا سکتا ہے، کچھ عرصے سے بچوں کے ساتھ زیادتی کے واقعات میں اضافے کی خبروں کے بعد سزا بڑھانے کی ضرورت محسوس کی گئی۔ اس سلسلے میں تمام حلقوں کی طرف سے مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ انسان نما وحشی درندوں کے لئے سزاؤں میں اضافہ کیا جائے۔ المیہ یہ ہے کہ دو تین سال کی بچیوں سے بھی زیادتی کے واقعات ہونے لگے ہیں۔ زیادتی کے بعد بچیوں کو موت کے گھاٹ اتارنے کی روح فرسا اور دل دہلا دینے والی خبریں ہر درد مند دل رکھنے والے کو خون کے آنسو رلاتی ہیں۔ گزشتہ سال قصور اور دیگر شہروں میں نو عمر بچوں سے زیادتی اور ان کی ویڈیو فلمیں بنا کر والدین کو بلیک میل کرنے کے درجنوں واقعات کا انکشاف ہوا تھا۔ جس کی انکوائری بھی ہوئی اور بہت سے افراد کو گرفتار بھی کیا گیا یہ معاملہ عدالت میں پہنچتے پہنچتے کافی وقت گزر گیا اور پھر متاثرہ خاندان کے افراد نے مایوسی، دباؤ اور لالچ کی وجہ سے حالات سے سمجھوتہ کر لیا اور چند ملزمان ہی کو کارروائی کا سامنا کرنا پڑا۔ گزشتہ ماہ چھ سات سال کی بچی زینب سے زیادتی ا ور پھر قتل کر کے کوڑے کے ڈھیر پر پھینکنے کا واقعہ پیش آیا تو پہلے اہل قصور اور پھر پورے ملک میں اس درندگی کے خلاف شدید احتجاج ہوا۔ اعصاب شکن تفتیش اور جانچ پڑتال کے بعد آخر کار قاتل کا سراغ لگا لیا گیا تو اسے سر عام پھانسی پر لٹکانے کا مطالبہ کیا جانے لگا جبکہ موجودہ قانون میں اس کی گنجائش نہیں۔ اس کے ساتھ ہی مختلف شہروں اور دیہات میں بچوں سے زیادتی کے واقعات کی خبریں نسبتاً زیادہ تعداد میں ٹی وی چینلز اور اخبارات کی خبروں میں شامل ہونے لگیں تو سخت سزا کا قانون بنانے کا مطالبہ بھی کیا جانے لگا۔یہ بات اطمینان بخش ہے کہ قومی اسمبلی میں سزا کو دوگنا کرنے کا بل متفقہ طور پر منظور کیا گیا ہے۔ اس کی ضرورت اس لئے بھی زیادہ ہے کہ معاشرے میں بچوں کے اغوا، زیادتی اور قتل کی وارداتوں میں اضافہ ہونے سے خوف و ہراس پھیل ر ہا ہے۔ عدم تحفظ کی فضا کے اثرات کو کم کرنے کے لئے مجرموں کو زیادہ سے زیادہ سزائے قید 20 سال اور دس لاکھ روپے جرمانے کا قانون بننے سے ایسے واقعات میں کمی کی توقع کی جا سکے گی۔ یہ کہا جا رہا ہے ایسے واقعات میں اضافے کو روکنے کے لئے ضروری ہے کہ مقدمات کا فیصلہ جلد کر کے سپیڈی ٹرائل کا سلسلہ شروع کیا جائے۔ فوری انصاف کرتے ہوئے مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچانے سے وحشی درندے سخت سزاؤں سے خوف محسوس کریں گے بہتر ہوگا کہ سزاؤں میں اضافے کا قانون جتنی جلدی ہو سکے اسے سینیٹ سے بھی منظور کروالیا جائے۔ اس کے ساتھ ساتھ پولیس کو بھی خصوصی ہدایات جاری کی جائیں کہ بچوں کے اغوا کی ایف آئی آر درج کرنے میں تاخیر نہ کی جائے اور والدین سے مکمل تعاون کرتے ہوئے ذمہ دار افراد کے خلاف کارروائی کو یقینی بنایا جائے۔

مزید :

رائے -اداریہ -