توہین عدالت کیس میں فیملی کورٹ فیروزوالہ کی خاتون جج سے جواب طلب

توہین عدالت کیس میں فیملی کورٹ فیروزوالہ کی خاتون جج سے جواب طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )عدالت عالیہ کے ترجمان نے وضاحت کی ہے کہ لاہور ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فیملی کورٹ فیروزوالہ کی خاتون جج سے جواب طلب کیا ہے ،انہیں ذاتی حیثیت میں طلب نہیں کیاگیا۔ترجمان کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دی گئی ہے کہ عدالت عالیہ کی جانب سے جاری حکم امتناعی کے باوجود فیملی کورٹ فیروز والا کی خاتون جج رابعہ سلیم مقدمہ کی سماعت جاری رکھے ہوئے ہیں، درخواست میں مذکورہ خاتون جج کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لانے کی درخواست کی گئی ہے۔جسٹس شاہد مبین نے درخواست گزار کے وکیل کا موقف سننے کے بعد فیملی کورٹ فیروز والا کی خاتون جج رابعہ سلیم سے دو ہفتوں میں جواب طلب کرتے ہوئے سماعت 19 مارچ تک ملتوی کر دی، عدالت کی جانب سے مذکورہ جج کو ذاتی حیثیت میں پیش ہونے کا کسی بھی قسم کا کوئی حکم جاری نہیں کیا گیا ہے۔

خاتون جج

مزید :

علاقائی -