انتظامی افسروں کی نااہلی‘ وومن یونیورسٹی حکومتی خزانے پر بوجھ بن گئی

انتظامی افسروں کی نااہلی‘ وومن یونیورسٹی حکومتی خزانے پر بوجھ بن گئی

  

ملتان(جنرل رپورٹر)و ویمن یونیورسٹی ملتان انتظامی افسروں کی نا اہلی کی وجہ سے حکومتی خزانے پر بوجھ بن گئی ہے۔وائس چانسلر ،رجسٹرار سمیت متعدد انتظامی افسر صرف تنخواہ وصول (بقیہ نمبر47صفحہ12پر )

کرنے کے لئے آتے ہیں اور خانہ پری کیلئے کچھ منٹ دفتر میں بیٹھ کر غائب ہو جاتے ہیں۔وویمن یونیورسٹی کو سیکورٹی گارڈز نے نو گو ایریا بنا رکھا ہے۔جہاں طالبات کو اندر جانے کے لئے شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔انتظامی افسروں کی عدم دلچسپی کی وجہ سے یونیورسٹی میں داخلوں کی شرح ہر سال کم ہو رہی ہے۔ قائم مقام وائس چانسلر پروفیسر طلعت افزااور رجسٹرارثمینہ سلیم کے دفاتر تک کسی کو نہیں پہنچنے دیا جاتا ۔یونیورسٹی میں مختلف قسم کی معلومات ،داخلے سے متعلق تفصیلات اور مسائل کے حل کے لئے رجوع کرنے والے والدین اور طالبات دھکے کھا کر واپس چلے جاتے ہیں جن سے سیکورٹی گارڈز نہائیت تضحیک آمیز رویہ اختیار کرتے ہیں۔اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور سے تعلق رکھنے والی پروفیسر کو قائم مقام وی سی کا چارج دے کر یونیورسٹی کو ناکام بنانے کی سازش کی جا رہی ہے۔قائم مقام وائس چانسلر پروفیسر طلعت افزا صرف ہفتے میں ایک روزکے لئے تفریحی دورے پر ملتان آتی ہیں جو سرکاری وسائل کا استعمال کر کے روانہ ہو جاتی ہیں۔انکے کسی ماتحت کو بھی ان سے مسائل کے حوالے سے نہیں ملنے دیا جاتا ۔چھوٹا سٹاف اور سیکورٹی گارڈز رکاوٹ بن جاتے ہیں۔مرد سٹاف یونیورسٹی میں ہونے والی تقریبات میں انجوائے کی غرض سے بھر پور شرکت کرتے ہیں۔دیگر شہروں میں ہونے والی تعلیمی کانفرنسز اور ورکشاپس و تقریبات میں نان ٹیچنگ اور چہیتے سٹاف کو بھیج دیا جاتا ہے تاکہ وہ ٹی اے ڈی اے کھرا کر سکیں۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -