گلبرگ ، موٹر سائیکل سواروں نے گورنمنٹ کالج یونیورسٹی کے پروفیسر کو سرعام قتل کر دیا

گلبرگ ، موٹر سائیکل سواروں نے گورنمنٹ کالج یونیورسٹی کے پروفیسر کو سرعام قتل ...

  

لاہور(کرائم رپورٹر)ٹارگٹ کلنگ ہے یا دیرینہ دشمنی، گلبرگ میں نامعلوم موٹرسائیکل سواروں نے گورنمنٹ کالج یونیورسٹی کے پروفیسر کو سرعام فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا۔پولیس نے مقدمہ درج کر کے ٹارگٹ کلنگ سمیت مختلف پہلوؤں پر تفتیش شروع کر دی۔ کلمہ چوک کے قریب دو نامعلوم موٹرسائیکل سواروں نے پروفیسر ڈاکٹر تنظیم اکبر پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہو گئے، ملزم موقع سے فرار ہو گئے ڈاکٹر تنظیم اکبر کو شدید زخمی حالت میں ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ڈاکٹروں نے اسنکی موت کی تصدیق کر دی اطلاع ملنے پر پولیس نے موقع پر پہنچ کر لاش کو قبضے میں لے کر پورسٹمارٹم کے لیے منتقل کر کے موقع سے تمام شواہد اکٹھے کر لیے بعب ازاں پورسٹمارٹم کا عمل مکمل ہونے کے بعدلاش تدفین کے لیے ورثا کے حوالے کر دی ۔پولیس نے مقتول کے بھائی زبیرچیمہ کی درخواست پر قتل کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کر کے ٹارگٹ کلنگ سمیت مختلف پہلوؤں پر تفتیش شروع کر دی ہے۔پولیس کے مطابق واردات کی سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کرلی گئی ہے۔فوٹیج میں حملہ آور کوگولی مارنے سے پہلے ان سے باتیں کرتادکھائی دیا، ہے ملزم کی شناخت کے لیے فوٹیج مقتول کے اہلخانہ کودکھائی گئی ہے تاہم تاحال اس کی خت نہیں ہو سکی ۔ واردات کے لیے حملہ آوروں نے نائن ایم ایم کا پستول استعمال کیا ابتدائی رپورٹ کے مطابق مقتول کو چار گولیاں لگیں جن شنامیں سے ایک سینے میں پیوست ہوئی جو موت کی وجہ بنی وزیراعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف نے جی سی یونیورسٹی کے پروفیسر کے قتل کا نوٹس لیتے ہوئے سی سی پی اوکیپٹن ریٹائرڈ امین وینس سے رپورٹ طلب کر لی۔ مقتول پروفیسر تنظیم اکبر چیمہ بیوی اور 3بچوں کے ہمراہ مرغزار کالونی میں رہا ئش پذیر تھے،گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہورکے وائس چانسلر ،اساتذہ اورسٹاف ممبران نے شعبہ نباتات کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ڈاکٹر تنظیم اکبر چیمہ کے قتل پر گہرے رنج وغم کا اظہار کیا ہے ۔یونیورسٹی اساتذہ نے وزیرِ اعلیٰ پنجاب،پولیس حکام اور دیگر متعلقہ اداروں سے قاتلوں کو جلد گرفتار کرنے اور سزا دلوانے کی درخواست کی ہے۔یونیورسٹی اساتذہ کے مطابق ڈاکٹر تنظیم انتہائی شفیق استاد تھے۔انہوں نے 13سال تک گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور میں تدریس و تحقیق کے فرائض سر انجام دیئے۔ڈاکٹر تنظیم اکبر چیمہ 2004ء میں بطور لیکچرر یونیورسٹی میں بھرتی ہوئے تھے۔وہ یونیورسٹی کے گارڈن اور گراؤنڈز کے انچارج بھی تھے۔پروفیسر ڈاکٹر تنظیم اکبر چیمہ کی لا ش پو لیس نے ضروری کا رروائی کے بعد ورثاء کے حوالے کر دی ۔متاثرہ خاندان لاش لیکر ا آ با ئی گا ؤ ں گو جر ہ چلے گئے جہاں مقتول کو سینکڑ وں سو گو اروں کی مو جو دگی میں سپر د خا ک کر دیا گیا ۔ تدفین کے وقت کئی رقت آمیز مناظر بھی دیکھنے کو ملے۔لاہور میں ٹارگٹ کلنگ اور پروفیسر کے قتل کی یہ پہلی وردات نہیں اس سے قبل ٹارگٹ قتل کی وارداتوں میں شیخ زید ہسپتال کے پروفیسرڈاکٹر،یونیورسٹی کی ایک خاتون پروفیسر اور سائنس کا لج کے پر وفیسر کوقتل کر دیا گیا تھا۔لاہور پو لیس اس سے قبل باقی تینوں قتل کی ورداتوں میں ملوث ملز م گرفتار کر چکی ہے ۔ اس قتل کی وردات کے ملز م تاحال گرفتار نہیں ہوئے ۔سی سی پی او لا ہور ایڈ یشنل آئی جی کیپٹن ریٹائرڈ امین وینس نے اس وقوعہ کے با رے میں پاکستان کو بتا یا ہے کہ ملوث ملزموں کو بھی ضرور گرفتا ر کیا جا ئے گا۔

پروفیسر قتل

مزید :

صفحہ اول -