ڈی جی والڈ سٹی کا ڈیرہ کا دورہ،تاریخی عمارتوں کا جائزہ

ڈی جی والڈ سٹی کا ڈیرہ کا دورہ،تاریخی عمارتوں کا جائزہ

  

ڈیرہ غازیخان(بیورورپورٹ)ڈائریکٹر جنرل والڈ سٹی اتھارٹی لاہور کامران خان لاشاری نے کہا ہے کہ ڈیرہ غازیخان کے تاریخی ورثہ کی حفاظت اور خوبصورتی میں اضافہ سے علاقے کی سیاحت کو مزید فروغ مل سکتا ہے جبکہ یہتاریخی ورثہ خوبصورتی کے لحاظ سے کسی اور شہر سے کم نہیں. انہوں نے یہ بات ڈیرہ غازی خان کے تین روزہ دورہ کے دوران شہر کی تاریخی عمارات و دیگر ورثہ کا جائزہ  کے دوران کہی.  ڈائریکٹر کنزرویشن لاہور والڈ سٹی اتھارٹی نجم ثاقب بھی ان کے ہمراہ تھے پروفیسر شعیب رضا نے انہیں تاریخی عمارات بانی شہر غازی خان میرانی اول (بقیہ نمبر26صفحہ10پر)

کے مقبرہ کی طرز تعمیر دکھائی، یہ مقبرہ ۱۴۹۱ میں تعمیر ہوا تھا۔قیام پاکستان کے بعد یہ مقبرہ محکمہ آثار قدیمہ کی تحویل میں ہے اور گزشتہ عشرے دوران اس کی بہترین تزئین و آرائش کی گئی تھی کامران لاشاری نے اس مقبرے کی ہشت پہلو بناوٹ اور اندرونی ساخت میں دلچسپی لی کامران لاشاری کوکمشنر ڈیرہ غازی خان لیاقت چھٹہ کے ہمراہ غازی گھاٹ کے دورہ کے دوران انگریز دور کا کم پانی والا جہاز بھی دکھایا گیا، پروفیسر شعیب رضا نے بتایا کہ جہاز چار عشرے سے وہاں پڑا ہے اور وقت کے ساتھ ساتھ تباہ ہورہا ہے، اگر اس تاریخی ورثہ کو یہاں سے کسی محفوظ مقام پر منتقل کر دیا جائے تو اس کو خوبصورت بنایا جا سکتا ہے۔ کامران لاشاری نے تجویز دی کہ اگر اس جہاز کو نئی پیالہ جھیل والی جگہ پر لاکر محفوظ کیا جائے تو اس جگہ کی خوبصورتی میں کافی اضافہ ہوسکتاہے، کامران لاشاری کو شہر ڈیرہ غازی کے وسطی بلاک میں موجود  انگریز دور کے تعمیر کردہ قسمانی محل کا بھی دورہ کروایا گیا، یہ چھوٹی لیکن پر کشش عمارت برمنگھم پیلس کے نقشہ سے متاثرہوکر مسلم بخش قسمانی نے تعمیر کروائی تھی، پروفیسر شعیب رضا نے بتایا کہ ڈیرہ غازیخان میں پرانے مکانات، ان کے اوپر تاریخی پلیٹیں اور مندر آج بھی اچھی حالت میں موجود ہیں،اسی طرح سو سال قبل کا تعمیر کردہ ہندو ہائی سکول اپنی اصل عمارت کے ساتھ آج بھی موجود ہے، اس سکول میں ایک ہندو خاندان کی طرف سے عطیہ کردہ پینے کے پانی کے لئے تعمیر شدہ ایک ٹینکی آج بھی موجود ہے جس پر ایک یادگاری پلیٹ نصب ہے جس میں اس ہندو کے خاندان کے 71 افراد کے نام درج ہیں جو کوئٹہ زلزلہ کے نتیجہ میں ابدی نیند سو گئے تھے اس سکول کا اس وقت کے انگریز گورنرسر مونٹگمری نے افتتاح کیا تھا۔ کامران لاشاری نے تونسہ اور فورٹ منرو کا بھی وزٹ کیا، انہوں نے تونسہ کے بازار اور شہر کی گلیوں کو کافی منظم پایا، فورٹ منرو کی خوبصورتی میں اضافہ کے لیے انہوں نے ڈویژنل ایڈمنسٹریشن کو مشاورت دی. کامران لاشاری کو ڈیرہ غازی خان کے روائتی کلچر ہماچہ یعنی بڑی چارپائی سے بھی روشناس کرایا گیا اور انہیں دنیاکی سب سے بڑی چارپائی بھی دکھائی گئی جو خیابان سرور کالونی میں موجود ہے، اس چارپائی پر بیک وقت ساٹھ افراد بیٹھ کر چائے پی سکتے ہیں اور گپ شپ کر سکتے ہیں۔

لاشاری

مزید :

ملتان صفحہ آخر -