خالد شیخ نے اپنی سوچ بدل لی،امریکی میڈیا کا دعویٰ

خالد شیخ نے اپنی سوچ بدل لی،امریکی میڈیا کا دعویٰ

قرآن کریم ہمیں کسی بھی طریقے سے طاقت کے استعمال سے منع کرتا ہے اور تلقین کرتا ہے کہ لوگوں کو منطق سے قائل کیا جائے,القائدہ کو امریکی آزادی سے نفرت نہیں ہے

خالد شیخ نے اپنی سوچ بدل لی،امریکی میڈیا کا دعویٰ

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) ورلڈ ٹریڈ سینٹر کے مرکزی کردار خالد شیخ محمد نے اپنےسابقہ پرتشدد نظریات سے توبہ کرتے ہوئے انہیں دین اسلام اور قرآن کے منافی قرار دے دیا ہے۔ اپنے 36 صفحات پر مشتمل مضمون میں اس کا کہنا تھا کہ قرآن کریم ہمیں کسی بھی طریقے سے طاقت کے استعمال سے منع کرتا ہے اور تلقین کرتا ہے کہ لوگوں کو منطق سے قائل کیا جائے۔ امریکی ویب سائٹ کا دعویٰ ہے کہ خالد شیخ کا کہنا ہے کہ اسے اور القائدہ کو امریکی آزادی سے نفرت نہیں ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ مغربی میڈیا کی اس بات پر یقین نہ کیا جائے کہ وہ اور القائدہ امریکہ میں دی گئی آزادی، جمہوریت اور انسانی حقوق سے نفرت کرتی ہے بلکہ ہم امریکہ کی جانب سے مسلمانوں پر روا رکھے گئے ظلم اور اسرائیل سے محبت کے باعث اس طرح کر رہے ہیں۔ اس کا کہنا ہے کہ خوشی نہ صرف موسیقی سننے، مال و متاع، ڈانس اور آزاد زندگی گزارنے میں ملتی ہے بلکہ یہ درست راستے پر رہنے سے بھی ملتی ہے تاہم مغربی دنیا کی خوشی ڈھونڈنا ایسے ہی ہے کہ کوئی ماہی گیر صحرا میں جا کر مچھلی تلاش کرے یا کوئی شکاری سمندر میں جا کر ہرن کا شکار کرے۔ امریکی ویب سائیٹ کے مطابق خالد شیخ محمد کا کہنا ہے کہ اسلام طاقت کے استعمال کو منع کرتا ہے۔یہ باتیں ان تمام نظریات کی نفی ہے جو چند سال قبل خالد شیخ کے تھے جس میں اس نے طاقت کے استعمال کو درست قرار دیا تھا اور وہ بڑے فخر سے کہا کرتا تھا کہ اس نے اپنے دائیں ہاتھ سے ایک یہودی امریکی صحافی ڈینئل پرل کا قتل کیا تھا اور اس نے انتہائی دلیری کے ساتھ ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملہ کرنے کی منصوبہ بندی کی تھی۔یہ انوکھی منطق امریکی میڈیا کی ہے۔

خالد شیخ کو 2006ءمیں پاکستان سے گرفتار کیا گیا تھا۔

مزید : بین الاقوامی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...