ترسیلات زر کو پیداواری سرگرمیوں کے فروغ کیلئے استعمال کیاجائے

ترسیلات زر کو پیداواری سرگرمیوں کے فروغ کیلئے استعمال کیاجائے

اسلام آباد (اے پی پی) اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر عاطف اکرام شیخ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ترسیلات زر کو پیداواری سرگرمیوں کے فروغ کیلئے استعمال میں لانے کی حوصلہ افزائی کرے جس سے ملک میں کاروباری سرگرمیاں تیز ہونگی اور معیشت کو بہتر فروغ ملے گا۔ جمعرات کو اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ ملک میں ترسیلات زر کا فروغ کافی حوصلہ افزاء ہے کیونکہ سمند پار پاکستانیوں نے موجودہ مالی سال کے پہلے چھ ماہ یعنی جولائی تا دسمبر کے دوران 9.7 ارب روپے سے زائد کی ترسیلات زر بھیجی ہیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ گزشتہ سال کے اسی عرصہ کے مقابلہ میں اس سال بیرونی ترسیلات زر میں 6 فی صد سے زائد اضافہ ہوا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر ترسیلات زر کا یہی رجحان برقرار رہا تو سالانہ ترسیلات زر 20ارب ڈالر تک پہنچ سکتی ہیں۔ انہوں نے زور دیا کہ حکومت کو چائیے وہ بہتر ترغیبات فراہم کر کے ترسیلات زر کو کاروباری اور معاشی سرگرمیوں کے فروغ کیلئے استعمال میں لانے کی حوصلہ افزائی کرے جس سے معیشت کیلئے زیادہ فائدہ مند نتائج برآمد ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں بہت سے خاندانوں کا ذریعہ معاش ترسیلات زر سے وابستہ ہے اور عوام کی قوت خرید بہتر ہونے سے صنعتوں کو بھی فائدہ پہنچ رہا ہے ۔ تاہم ضرورت اس بات کی ہے کہ ترسیلات زر کو بچت کو فروغ دینے اور سرمایہ کاری میں استعمال میں لانے پر توجہ دی جائے تا کہ ترسیلات زر معیشت کو مستحکم کرنے میں نمایاں کردار ادا کر سکیں۔

عاطف اکرام شیخ نے کہا کہ پاکستان میں ترسیلات زر کا حجم براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری اور ترقیاتی امداد سے بھی زیادہ ہے اور اگر ان کا حصہ بچت سکیموں میں بڑھایا جائے تو ملک میں کیپٹل مارکیٹ کو بہتر فروغ ملے گا اور کاروباری سرگرمیوں کو وسعت دینے کیلئے فنڈز بھی زیادہ آسانی سے دستیاب ہوں گے۔

مزید : کامرس