صدر بار ڈسکہ اور وکیل کی قتل ،سابق ایس ایچ او شہزاد وڑائچ کو 4بار سزائے موت ،30سال قید با مشقت کا حکم

صدر بار ڈسکہ اور وکیل کی قتل ،سابق ایس ایچ او شہزاد وڑائچ کو 4بار سزائے موت ...

گوجرانوالہ(بیورو رپورٹ)ڈسکہ میں ایس ایچ او کے ہاتھوں صدر بار ڈسکہ اور ان کے ساتھیوں کو فائرنگ کر کے قتل اور زخمی کرنے کے مشہور کیس کا فیصلہ سنا دیا گیا،سابق ایس ایچ او کو جرم ثابت ہونے پر چار بار سزائے موت ،تیس سال قید با مشقت اور چار چار لاکھ روپے جرمانے کا حکم دے دیا گیا ہے ۔انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج چودہری امتیاز احمد نے سنٹرل جیل کے کورٹ روم میں ڈسکہ کے مشہور مقدمہ کی سماعت کے بعد کیس کا فیصلہ سنا دیا ہے ، جس میں صدر بار ڈسکہ رانا خالد اور ساتھی وکیل عرفان چوہان کے قتل کا جرم ثابت ہونے پر سابق ایس ایچ او ، انسپکٹر شہزاد وڑائچ کو جرم ثابت ہونے پر چار بار سزائے موت اور مقتولین کے ورثاء کو چار لاکھ روپے معاوضہ اور چار لاکھ روپے جرمانہ کی رقم کی ادائیگی جبکہ وکیل سمیت تین افراد کو زخمی کرنے کے دوسرے مقدمہ میں تیس سال قید با مشقت کا حکم سنا دیا ہے ، جبکہ مجرم کو دیت کا حصہ بھی اد اکرنا ہوگا ، مجرم نے پچیس مئی دو ہزار پندرہ کو تھانہ سٹی ڈسکہ کے ایس ایچ او انسپکٹر رانا شہزاد وڑائچ نے پرانی کچہری کے قریب تحصیل بار ڈسکہ کے صدر رانا خالد عباس ، انکے ساتھی وکلاء عرفان چوہان اور جہانزیب کو فائرنگ کر کے زخمی کر دیا تھا ،جبکہ ڈسکہ بار کے صدر رانا خالد عباس اور عرفان چوہان ہسپتال جاتے ہوئے زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے راستے میں ہی جاں بحق ہو گئے تھے۔

مزید : علاقائی