گراس روٹ لیول پر ہیپاٹائٹس ویکسی نیشن کیمپ قائم کئے جائیں ، وزیراعلٰی سندھ

گراس روٹ لیول پر ہیپاٹائٹس ویکسی نیشن کیمپ قائم کئے جائیں ، وزیراعلٰی سندھ

 کراچی(اسٹاف رپورٹر) سندھ میں تین ملین سے زائد ہیپاٹائٹس کے مریض تھے جب وزیراعلیٰ سندھ نے 2009میں خصوصی طور پر 2.7بلین روپے کی لاگت سے ہیپاٹائٹس پری وینشن اینڈ کنٹرول پروگرام کا آغاز کیا جس کا مقصد حفاظتی اور جامع اقدامات اٹھانا اور عوام میں اس حوالے سے آگاہی پیدا کرنا تھا۔اس امر کا اظہار وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی زیر صدارت وزیراعلیٰ ہاؤس میں منعقدہ اجلاس میں کیا گیا ۔ اجلاس میں سینئروزیر برائے خزانہ سید مراد علی شاہ ، وزیرصحت جام مہتاب ڈھر ، صوبائی مشیر اطلاعات مولا بخش چانڈیو ، ایڈیشنل چیف سیکریٹری (ترقیات) اعجاز علی خان ، وزیراعلیٰ سندھ کے پرنسپل سیکریٹری علم الدین بلو، سیکریٹری خزانہ سہیل راجپوت ، سیکریٹری صحت سعید منگنیجو اور محکمہ صحت کے تحت جاری ورٹیکل پروگرام کے ہیڈ نے شرکت کی۔اجلاس میں بتایا گیا کہ ایک سروے کیا گیا تھا جس سے صوبہ سندھ میں ہیپاٹائٹس کے مریضوں کی تعداد سامنے آئی جس کے مطابق صوبہ سندھ میں تقریباً تین ملین ہیپاٹائٹس کے مریض رپورٹ ہو ئے ہیں جن میں سے 2.5فیصد مریض ہیپا ٹائٹس بی اور 4.9فیصد مریض ہیپا ٹائٹس سی کا شکار تھے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے 2.7بلین روپے کی لاگت سے ہیپا ٹائٹس پری وینشن اینڈ کنٹرول پروگرام کی ایک خصوصی مہم کا 2008۔ 2011ء کا آغاز کیا ۔ پروگرام کا آغاز جنوری 2009میں کیا گیا اور جسے بعد میں تین سال 2011-2014تک مزید توسیع دی گئی جس پر لاگت کا تخمینہ 3.315بلین روپے تھا۔ سیکریٹری سعید منگنیجو نے کہا کہ صوبہ میں 8,608,400افراد کو ہیپا ٹائٹس بی کی ویکسی نیشن دی گئی جس میں 2.9ملین جنرل پبلک ،1.9ملین ہائی رسک پاپولیشن ، 170001نوزائیدہ بچوں کو بطور پہلی خوراک ، 87538جیل میں قیدیوں ، 3488708اسکول جانے والے بچوں ، 194000افراد کو سیلاب سے متاثر علاقوں میں ،6540ہیمو فلیک اکیڈمک ڈائلیسیس کے مریضوں اور 10201دیگر افراد کو ویکسی نیشن دی گئی۔ ایک سال کے جواب میں پروگرام منیجر ڈاکٹر خالق شیخ نے کہا کہ پروگرام کے تحت 462365مریضوں کا علاج مکمل ہوچکا ہے جن میں 154405مریض ہیپا ٹائٹس ۔سی، 14636ہیپاٹائٹس بی اور 3638ہیپاٹائٹس ڈی کے تھے ۔ جبکہ ان کے علاوہ 26418مریض زیر علاج ہیں جن میں 17890مریض ہیپاٹائٹس سی، 88347ہیپاٹائٹس بی اور 181مریض ہیپاٹائٹس ڈی کے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پروگرام کے تحت 300,000اسکول جانے والے بچوں کو ستمبر ۔اکتوبر 2015میں ویکسینیشن دی گئی ان بچوں کا تیسرا ڈوز فروری 2016میں دیا جائیگا ۔ انہوں نے بتایا کہ ہم نے حال ہی میں 2165قیدیوں کو جیل میں ویکسین فراہم کی ہے۔ صوبائی وزیر صحت جام مہتاب ڈھر نے کہا کہ پروگرام کے تحت 20.7ملین آٹو ڈسٹرکٹائبل )اے ڈی ایس)اضلاع کو فراہم کی گئی ہیں تاکہ اے ڈی سرنجوں کے استعمال کو فروغ دیا جاسکے اور استعمال شدہ سرنجوں کی حوصلہ شکنی ہوسکے۔انہوں نے کہا کہ شعور اور آگاہی پیدا کرنے کے لئے جیلوں اور سب جیلوں میں 154آگاہی کے سیشنس کا انعقاد کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے نوابشاہ میں مولیکیولر لیب کے قیام کی منصوبہ بندی کی ہے اور مختلف اضلاع کے تعلقہ اسپتالوں میں چھ نئے مراکز کھولے جائیں گے۔ وزیراعلیٰ سندھ نے محکمہ صحت کو ہدایت کی کہ وہ اسکریننگ کی فراہمی میں اضافہ کریں اور گراس روٹ لیول پر ہیپاٹائٹس اسکریننگ اور ویکسینشن کیمپ قائم کئے جائیں خاص طور پر ہائی رسک علاقوں میں انہوں نے کہا کہ آپ لوگ پروفیشنلس (ڈاکٹرز) ہیں اور میں امید کرتا ہوں آپ صوبہ سندھ کو ہیپا ٹائٹس سے پاک کرنے میں اپنا فعال کردار ادا کریں گے۔

مزید : کراچی صفحہ اول