خصوصی عدالت کا فیصلہ کالعدم کرنا مکمل درست

    خصوصی عدالت کا فیصلہ کالعدم کرنا مکمل درست

  



معروف قانون دان محمد اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے کہا ہے سابق آرمی چیف پرویز مشرف کے حق میں عدالت عالیہ کا حالیہ فیصلہ سو فیصد در ست ہے، خصوصی عدالت نے انہیں غیر قانونی طور پر سزائے موت دی اور اس عدالت کا فیصلہ قانون و آئین سے متصادم تھا۔وہ ایشو آف دی ڈے میں گفتگو کررہے تھے۔انہوں نے کہا بغاوت کیا ہوتی ہے خصوصی عدالت نے اس کی سزا سناتے وقت اس کی تشریح نہیں کی، ملزم کی غیر موجودگی میں ٹرائل کرنا اور پھانسی کی سزا دینا دونوں ہی غیر آئینی ہیں اور ایسے کیس میں جس میں ملزم حاضر ہی نہ ہو اس کا ٹرائل نہیں ہو سکتا۔ خصوصی عدالت کا فیصلہ آئین کے آر ٹیکل ٹو اے 227دس اے کی خلاف ورزی تھا۔ہائیکورٹ نے خصوصی عدالت کا فیصلہ ختم کر کے قانونی اور آئینی کام کیا ہے۔ آر ٹیکل 6میں ترمیم 2010میں ہوئی مگر کیس 2007کا تھا اس لحاظ سے بھی مشرف کا فیصلہ غیر آئینی تھا۔

اظہر صدیق

مزید : صفحہ اول