لاہور ہائیکورٹ نے احتساب  عدالت سے احد چیمہ کیخلاف کیسوں  پر رپورٹ طلب کرلی 

 لاہور ہائیکورٹ نے احتساب  عدالت سے احد چیمہ کیخلاف کیسوں  پر رپورٹ طلب ...

  



لاہور (نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس محمد طارق عباسی اور مسٹر جسٹس چودھری مشتاق احمد پرمشتمل ڈویژن بنچ نے احتساب عدالت سے ایل ڈی اے کے سابق ڈی جی احد چیمہ کے خلاف کیسوں پر ہونے والی کارروائی کی رپورٹ طلب کر لی ہے،فاضل بنچ نے یہ رپورٹ احد چیمہ کی ایل ڈی اے سٹی سکینڈل،آشیانہ اقبال ہاؤسنگ سکیم اور آمدنی سے زائد اثاثہ جات کے مقدمات میں ضمانت پر رہائی کی درخواستوں پر کی ہے،فاضل بنچ نے یہ درخواستیں اآشیانہ اقبال کیس میں شریک ملز م کی درخواست ضمانت مستردکرنے والے  بنچ کو بھجوانے کی بات کی تو  ملزم کے وکیل اعظم نذیر تارڑنے کہا کہ8 ماہ لگے ہیں یہاں تک پہنچنے میں، کبھی جواب نہیں آ رہا کبھی ریکارڈ نہیں آ رہا، اس پر جسٹس محمد طارق عباسی نے کہا کہ ایک طرف قانون ہے اور ایک طرف ہائیکورٹ کے بنچوں کی تشکیل کی پالیسی ہے ایسی صورت میں ہم کیا کریں گے، وکیل نے کہا کہ جسٹس ملک شہزاد نے ہائیکورٹ کے نیب کے خصوصی بنچ کو ہی سماعت کرنے کی اجازت دی تھی، عدالت نے پوچھا کہ جوترمیمی نیب آرڈیننس آیا تھا وہ واپس ہوا یا نہیں، اعظم تارڑ نے کہا کہ نیب ترمیمی آرڈیننس ابھی موجود ہے،23 ماہ سے احد چیمہ گرفتار ہے، ڈیڑھ سال سے ایل ڈی اے سٹی اور دوسرے مقدمات کا ریفرنس ہی نہیں پیش کیا گیا، عدالت کا نیب پراسیکیوٹر سے استفسارکیا کہریفرنس نہ آنے کی آپ کے پاس کیا وضاحت ہے؟  جس پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ آئندہ سماعت پر نیب سے ہدایات لے کر بتا دوں گا، احد چیمہ کے وکیل نے کہا کہ ایل ڈی ایل سٹی میں احد چیمہ کے علاوہ ایل ڈی اے کا کوئی بھی ملازم ملزم نہیں بنایا گیا،نیب کے وکیل نے کہا کہ الفا ا سٹیٹ کے مالک گرفتار ملزم آصف ملک اور عبدالرشید نے احد چیمہ وغیرہ کی ملی بھگت سے اربوں روپے کی خوردبرد کی،ملزمان ایل ڈی اے سٹی میں ڈویلپمنٹ پارٹنر تھے انہوں غیر قانونی طور پر کروڑوں روپے کے پلاٹ فروخت کر دئیے۔احد چیمہ نے فیملی ممبران کے نام بے نامی جائیدادیں بنائیں،ان کے اثاثہ جات کی مارکیٹ  ویلیو600 ملین روپے کے قریب ہے، ملزم کے وکیل نے کہا کہ نیب نے پہلے آشیانہ اقبال میں گرفتار کیا پھر آمدن سے زاید اثاثہ جات میں، احد خان چیمہ کو 90دن جسمانی ریمانڈ کاٹنے کے بعد جوڈیشل کیا گیا، جوڈیشل ہونے کے 3 ماہ بعد پھردوسرے کیس میں گرفتاری ڈال دی گئی۔ان درخواستوں کی مزید سماعت 28 جنوری کو ہو گی۔

احد چیمہ

مزید : صفحہ آخر