خیبر پختونخوا اسمبلی اجلاس، پولیو کیسز میں اضافے پر بحث

  خیبر پختونخوا اسمبلی اجلاس، پولیو کیسز میں اضافے پر بحث

  



پشاور(نیوز رپورٹر) خیبرپختونخوا سمبلی اجلاس میں وقفہ سوالات کے دوران رکن اسمبلی نگہت اورکزئی،سراج الدین،ظفر اعظم،عنایت اللہ،احمد کنڈی ودیگر نے محکمہ بلدیات مواصلات وتعمیرات،محکمہ آبنوشی،محکمہ ٹرانسپورٹ اور قانون کے متعلق کارکردگی بارے سوالات کئے جن کے صوبائی وزیر قانون سلطان محمد اور وزیر سماجی بہبود نے جوابات دیئے،رکن اسمبلی نعیمہ کشور خان اور عنایت اللہ نے ایوان اجلاس کے دوران تحریک التواء پیش کرکے معمول کی کارروائی روک کر ایک اہم مسئلے پر بحث کی وہ یہ کہ پورے ملک میں خاص کر صوبہ خیبر پختونخوا میں پولیو کے کیسوں میں اضافے پر بحث کی گئی رکن اسمبلی عنایت اللہ نے کہا کہ بروز پیر سپیکر کی چیئر پر رکن اسمبلی عبدالسلام کو غیر قانونی طورپر پروسیٹڈنگ کی ہے وہ ہاؤس کو چلانہیں سکتا وہ غیر قانونی طور پر ایوان کو نہیں چلا سکتا کیونکہ اس نے اسمبلی سے اجازت نہیں لی سپیکر نے رولنگ دیتے ہوئے کہا کہ کسی ماہر قانون سے معلوم کرتے ہیں رکن اسمبلی نگہت اورکزئی نے کہا کہ کرسی تو آپ کو خدا نے دی ہے لیکن اس مضبوط کرنا آپ کی ذمہ داری ہے اس کو مضبوط بنائیں رکن اسمبلی سراج الدین نے سوال کرتے ہوئے کہا کہ محکمہ آبنوشی کے منصوبوں کو شمسی توانائی پر منتقل کرنے کیلئے حکومت نے کیا طریقہ اپنایا ہے،صوبائی وزیر آبپاشی نے کہا کہ موجودہ حکومت نے صوبے میں عوام کو بروقت صاف پینے کا پانی مہیا کرنے کیلئے شمسی توانای کی سکیمیں شروع کی ہے جس کیلئے آب تک 32272466 ملین روپے خرچ کئے گئے ہیں اور شمسی توانائی پر 849 سکیمیں منتقل کی جاچکی ہے رکن اسمبلی ثمر بلور نے محکمہ قانون کے متعلق سوال کیا جو سپیکر مشتاق احمد غنی نے کمیٹی کے حوالے کردیا سپیکر نے رولنگ دیتے ہوئے کہا گذشتہ دنوں سوئی گیس کی کمی کی وجہ سے محکمہ سوئی گیس کے جی ایم کو جمعہ کے دن 2 بچے بلایا ہے جو کہ ایوان میں جواب دے کر سوئی گیس کی کمی کی وجہ بتائے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر