پروگرام میں بوٹ لانے کے بعد فیصل واوڈاکا تہلکہ خیز بیان سامنے آگیا

پروگرام میں بوٹ لانے کے بعد فیصل واوڈاکا تہلکہ خیز بیان سامنے آگیا
پروگرام میں بوٹ لانے کے بعد فیصل واوڈاکا تہلکہ خیز بیان سامنے آگیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا نے نجی نیوز چینل کے پروگرام میں بوٹ لانے کے بعد تہلکہ خیز بیان دے دیا ۔مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر پر ان کا کہنا تھا کہ آج کا بوٹ دراصل ان سیاسی جماعتوں کے منہ پر طمانچہ ہے جنہوں نے اپنی سیاست کی بنیاد تحریک انصاف کو بوٹ چاٹنے کے طعنے دے کر رکھی تھی۔ان کا کہنا تھاکہ البتہ خوشی ہوئی کہ بالآخر مریم بھی اپنی ٹیم سے افواج کا احترام کروا رہی ہے۔ یہ اچھی شروعات ہے۔

واضح رہے گزشتہ روز نجی ٹی وی چینل اے آر وائی نیوز کے پروگرام آف دی ریکارڈ میں صورتحال اس وقت بدلی جب پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا نے اچانک ایک کالے رنگ کا فوجی بوٹ میز پر رکھتے ہوئے کہامیں تو اب ہر پروگرام میں یہ رکھا کروں گا، یہ آج کی جمہوری ن لیگ ہے کہ اب لیٹ کے نہیں چوم کے بوٹ کو عزت دو۔فیصل واوڈا کی اس حرکت کے بعد کاشف عباسی نے چھوٹتے ہی کہا کہ میں تو سمجھا تھا یہ بندوق لے کر آئے ہیں یہ تو بندوق سے بھی زیادہ خطرناک چیز لے آئے ہیں۔ساتھ ہی کاشف عباسی نے سوال کیا کہ یہ بوٹ کس کا ہے تو جواب میں فیصل واوڈا نے جاوید عباسی کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا ان سے پوچھیں۔جاوید عباسی نے جواب دیا کہ ان کو اس سے بہتر اور کس کا پتا ہے۔فیصل واوڈا اس بوٹ کی چمک کے بارے میں بار بار بات کر رہے تھے تو کاشف عباسی نے ان سے پوچھا کہ اسے کس نے چمکایا ہے۔ جس پر فیصل واوڈا نے کہا کہ یہ چمک انسان کے ہاتھ کی نہیں ہو سکتی، جس حد تک یہ جا چکے ہیں یہ زبان سے چمکا ہوا لگ رہا ہے۔

قمر الزمان قائرہ نے فیصل واوڈا کی اس حرکت پر ردِ عمل دیتے ہوئے کہا کہ کاشف عباسی صاحب آپ اپنا پروگرام کر لیں، یہ اپنی حکومت کر لیں، ہم تو قوم کے سامنے ایسے گالیاں نہ سننے کو تیار ہیں نہ دینے کو تیار ہیں۔ان کے اس ردِ عمل کے بعد پروگرام میں سنجیدہ گفتگو شروع ہوئی۔قمر الزمان کائرہ نے کہا کہ ’حکومت کا ایک وزیر کہہ رہا ہے کہ فوج سیاست میں مداخلت کر کے اپنا ووٹ اس بوٹ کی بنیاد پر لیتی ہے۔اس کے ساتھ ہی قمر الزمان کائرہ اور جاوید عباسی اپنی سیٹوں سے اٹھ گئے اور معذرت کرتے ہوئے پروگرام چھوڑ کر چلے گئے۔

مزید : قومی


loading...