لوگ واٹس ایپ چھوڑنے لگے، کمپنی نے پریشان ہوکر اخباروں میں اشتہار دے دئیے

لوگ واٹس ایپ چھوڑنے لگے، کمپنی نے پریشان ہوکر اخباروں میں اشتہار دے دئیے
لوگ واٹس ایپ چھوڑنے لگے، کمپنی نے پریشان ہوکر اخباروں میں اشتہار دے دئیے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) میسجنگ ایپلی کیشن واٹس ایپ اپنی نئی پرائیویسی پالیسی کے باعث بھارت میں بھی مشکلات کا شکار ہو گیا ہے کہ لاکھوں کی تعداد میں صارفین اسے چھوڑ کر دیگر ایپلی کیشنز پر منتقل ہو رہے ہیں۔ اب واٹس ایپ نے اپنے صارفین کو دیگر ایپس پر جانے سے روکنے کے لیے اخبارات میں باقاعدہ اشتہاری مہم شروع کر دی ہے۔ دی انڈیپنڈنٹ کے مطابق بھارت دنیا میں واٹس ایپ کی سب سے بڑی مارکیٹ ہے جہاں اس کے صارفین کی تعداد 40کروڑ سے زائد بتائی جاتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ صرف بھارت ہی وہ واحد ملک ہے جہاں واٹس ایپ کی طرف سے اخبارات میں اشتہار دیئے گئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق بھارت کے 10بڑے اخبارات میں ’مکمل صفحے‘ کے اس اشتہار میں واٹس ایپ کی طرف سے کہا گیا ہے کہ ”ہم آپ کی پرائیویسی کی عزت اور حفاظت کرتے ہیں۔“ اشتہار کے متن میں واٹس ایپ کی طرف سے وضاحت کی گئی ہے کہ اس کی نئی پرائیویسی پالیسی سے لوگوں کے پیغامات کی رازداری متاثر نہیں ہو گی۔ واضح رہے کہ واٹس ایپ کے خلاف اس نئی پرائیویسی پالیسی پر قانونی کارروائی کا آغاز بھی بھارت سے ہوا ہے جہاں چیتنیا روہیلہ نامی ایک وکیل نے واٹس ایپ کی نئی پالیسی کے خلاف دہلی ہائیکورٹ سے رجوع کیا ہے اور اسے قومی سلامتی کی خلاف ورزی قرار دے ڈالا ہے۔

مزید :

سائنس اور ٹیکنالوجی -