این آر او نے ہمیشہ ملک کو نقصان پہنچایا ،شریفوں نے 30 سالوں میں کرپشن کو قابل قبول عمل بنا دیا : فرخ حبیب

این آر او نے ہمیشہ ملک کو نقصان پہنچایا ،شریفوں نے 30 سالوں میں کرپشن کو قابل ...
این آر او نے ہمیشہ ملک کو نقصان پہنچایا ،شریفوں نے 30 سالوں میں کرپشن کو قابل قبول عمل بنا دیا : فرخ حبیب
سورس: File Photo

  

 اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر مملکت اطلاعات و نشریات فرخ حبیب نے کہا ہے کہ شریفوں نے گزشتہ 30 سالوں میں کرپشن کو ایک قابل قبول عمل بنا دیا ہے، ان کے چپڑاسیوں اور چائے والوں کے اکاونٹس سے 16 ارب روپے نکلتے ہیں، جس شخص نے سات ارب ٹی ٹیز سے منگوائے وہ بڑے بھائی کا ضامن بھی ہے، جو آٹھ   ہفتے علاج کی غرض سے لندن گیا اور اب تک واپس نہیں آیا،تاریخ گواہ ہے کہ این آر او نے ہمیشہ ملک کو نقصان پہنچایا  اورہر این آر او کی قیمت پاکستان کے عوام کو ادا کرنا پڑی۔

نجی ٹی وی کے مطابق وزیر مملکت اطلاعات و نشریات نے کہا کہ تارکین وطن پاکستانی ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں انہیں سہولیات فراہم کرنا ہماری اولین ترجیح ہے،مختلف ممالک میں مقیم 90لاکھ اوورسیز پاکستانیوں کے لئےسمارٹ ہاوسنگ پراجیکٹ متعارف کرایا گیا ہے ،اوورسیز پاکستانی روشن ڈیجیٹل اکاونٹ کے ذریعے اپنی ترسیلات زرپاکستان بھجوا رہے ہیں جو ان کے اعتماد کا مظہر اور سٹیٹ بینک آف پاکستان بھی ان کےاعتمادپرپورا اتر رہاہے، اسی ویژن کے تحت سمارٹ ہاوسنگ پراجیکٹ کے ذریعے ہاوسنگ اپارٹمنٹ کی سہولت فراہم کرنے جارہے ہیں جس کی کابینہ نے منظوری بھی دے دی ہے۔

انہوں نے کہاکہ یہ روشن ڈیجیٹل اکاونٹس کے ذریعے تارکین وطن اس سہولت سے استفادہ کریں گے اور روشن ڈیجیٹل اکاونٹ ہولڈر جائیداد کی خریداری کے لئے قرض بھی حاصل کر سکتے ہیں، اس حوالے سے روشن ڈیجیٹل اکاونٹ ہولڈرز کو سہولیات کی فراہمی کا عمل مزید تیز کردیا گیا ہے، نجی ہاوسنگ منصوبوں میں نجی بینکس میں بھی مقابلے کی فضا ہے اور وہ بھر پور حصہ لے رہے ہیں، بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کی قوت خرید اچھی ہے، روشن ڈیجیٹل اکاونٹ کے ذریعے اوورسیز پاکستانی، پاکستان میں جائیدادیں خرید سکتے ہیں اور قرض بھی حاصل کرسکتے ہیں۔

وزیر مملکت اطلاعات و نشریات نے کہا کہ صحت انصاف کارڈ ایک مکمل یونیورسل ہیلتھ کئیر پروگرام ہے، جس میں امراض قلب، زچگی اور تمام طرح کی سرجری سمیت تمام امراض کے علاج کی سہولت دی گئی ہے، اس سہولت سے ایک خاندان 10لاکھ روپے تک کا علاج اپنی مرضی کے ہسپتال سے کراسکے گا،عوامی مفاد کے ان منصوبوں کو  کوئی بھی رول بیک نہیں کر سکتا کیونکہ جو بھی اسے رول بیک کرے گا وہ خود رول بیک ہوجائے گا۔انہوں نے کہاکہ شریفوں نے گزشتہ 30 سالوں میں کرپشن کو ایک قابل قبول عمل بنا دیا ہے،ان کے چپڑاسیوں اور چائے والوں کے اکاﺅنٹس سے 16 ارب روپے نکلتے ہیں۔ 

مزید :

قومی -