نیب میگا سکینڈل کیس :سپریم کورٹ نے 265ارب روپے کی برآمدگی کا تفصیلی ریکارڈطلب کر لیا

نیب میگا سکینڈل کیس :سپریم کورٹ نے 265ارب روپے کی برآمدگی کا تفصیلی ریکارڈطلب ...
نیب میگا سکینڈل کیس :سپریم کورٹ نے 265ارب روپے کی برآمدگی کا تفصیلی ریکارڈطلب کر لیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سپریم کورٹ نے نیب میگا سکینڈل کیس میں نیب سے ریکورکئے گئے 265ارب روپے کی برآمدگی کا تفصیلی ریکارڈکل تک طلب کر لیا۔تفصیلات کے مطابق جسٹس جواد ایس خواجہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے دو رکنی بنچ نے نیب میگا سکینڈل کیس کی سماعت کی ۔اس موقع پر جسٹس جواد ایس خواجہ اور ایڈیشنل پراسیکیوٹر نیب کے درمیان دلچسپ مکالمہ ہوا ۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے میگا سکینڈل میں نیب کی رپورٹ پر اظہار ناراضگی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ نیب کے پاس 15سال سے شکایات کی انکوائریاں زیر التواہیں۔ ایڈیشنل پراسیکیوٹر نیب نے کہا کہ کچھ وجوہات کی بنا انکوائری زیر التوا رہی جس پر جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا کہ کیا وجہ تھی، قوم جاننا چاہتی ہے کیوں انکوائریاں التواءکا شکار ہوئیں ،کیا یہ وجہ تھی کہ کسی کا فون آ گیا اور انکوائری ملتوی کر دی گئی ، آپ کو 15سال پہلے شکایت موصول ہوئی ہم نے معاملہ اٹھایا تو آپ متحرک ہو گئے ۔ ایڈیشنل پراسیکیوٹر نیب نے کہا کہ نیب نے عدالت سے کوئی حقائق نہیں چھپائے،ماضی کو چھوڑ کر 2014ءسے ہماری کارکردگی دیکھیں،میاں منشاءنے ابتدائی بیان ریکارڈ کرا دیا ، تفصیلی بیان عید کے بعد ریکارڈ کیا جائے گا ۔ جسٹس جواد ایس خواجہ نے ایڈیشنل پراسیکیوٹر نیب کومخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے تو یہ دیکھنا ہے کہ نیب نے اپنا کام کیا ہے یا نہیں،جن کے مقدمات 15سال سے پڑے ہوئے ہیں مجھے ان پر ترس آ رہا ہے،نیب نہیں چلا سکتے تو اس کی ذمہ داری بھی ہمیں دے دیں۔بعد ازاںعدالت نے نیب سے ریکورکئے گئے 265ارب روپے کی برآمدگی کا تفصیلی ریکارڈ کل تک طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت ملتوی کر دی۔

مزید :

قومی -