کاشتکار معیاری فصل کیلئے دھان کی باسمتی اور شاہین باسمتی کی پنیری رواں ماہ کھیتوں میں منتقل کردیں:ماہرین

کاشتکار معیاری فصل کیلئے دھان کی باسمتی اور شاہین باسمتی کی پنیری رواں ماہ ...

  



لاہور(اے پی پی )کاشتکار معیاری فصل کیلئے دھان کی باسمتی اور شاہین باسمتی کی پنیری رواں ماہ کھیتوں میں منتقل کردی ۔محکمہ زراعت پنجاب کے ترجمان کے مطابق دھا ن کی فصل سوائے ریتلی زمین کے تمام اقسام بشمول کلر اٹھی زمینوں میں کامیابی سے کاشت کی جا سکتی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ منتقلی کے وقت لاب کی عمر30 تا40دن ہونی چاہئے۔جس کھیت میں لاب منتقل کرنی ہو اسکی تیاری گہراہل چلاکر شروع کریں لیکن کدوبالکل نہ کریں تاکہ پانی لگانے سے نمکیات کی دھلائی ہوسکے۔ اگر وافر مقدار میں پانی موجودہو تولاب منتقل کرنے سے 7 تا 10دن پہلے کھیت کو پانی سے بھر دیں۔کلراٹھی زمینوں میں سفید کلرکی زیادتی کے باعث دھان کی نشوونما لاب کی منتقلی کے دس دن کے اندر متاثرہوتی ہے۔

انہوں نے کہاکہ اگر پنیری کو کھیت میں منتقل کرنے سے پہلے اس کی جڑوں کو زنک آکسائیڈ کے دو فیصد محلول میں ڈبو کر لگایا جائے تو زنک کی کمی کافی حد تک پوری کی جا سکتی ہے۔زنک کی زیادہ کمی کی صورت میں لاب منتقل کرنے کے دس دن بعد 5کلو گرام زنک سلفیٹ (33فیصد والا)یا 10کلوگرام زنک سلفیٹ(21فیصد والا) فی ایکڑ چھٹہ کریں۔ پنیری کی منتقلی کے لئے زمین کی تیاری کے وقت بوران کی کمی کی صورت میں 3کلوگرام بورک ایسڈ یا 4.5کلو گرام بوریکس 20فیصدفی ایکڑ ضرور استعمال کریں۔اگر پچھلی فصل کے لیے بوران کا استعمال کیا گیا ہے تو دھان کے لیے اس کے استعمال کی ضرورت ہے۔اگر پانی کی فراہمی معمول کے مطابق وافر ہو تو لاب لگانے کے وقت پانی کی گہرائی 3 تا 4 سینٹی میٹر ) ایک تا ڈیڑھ انچ( رکھیں اور پانی کی یہ سطح 15تا20دن تک برقرار رکھیں بعدمیں بتدریج پانی کی گہرائی 7 تا 8 سینٹی میٹر ) 3 انچ تقریباً( کر دیں۔ لاب کی منتقلی کے بعد ایک ماہ تک کھیت میں پانی متواتر کھڑا رکھیں تاکہ جڑی بوٹیاں کنٹرول میں رہیں۔ اس کے بعد کھیت کو چند دن کے لئے ہوا لگائیں تاکہ متواتر پانی کھڑا رہنے سے جو نقصان دہ مرکبات زمین میں بن چکے ہوں وہ ختم ہو جائیں پھردھان کی جڑی بوٹیوں کی تلفی کے لئے کیمیائی زہروں کا انتخاب اور استعمال محکمہ زراعت کے مقامی ماہرین کے مشورہ سے کریں۔زہر ڈالنے کے ایک ہفتہ بعد تک کھیت سے پانی خشک نہ ہونے دیں۔

مزید : کامرس