سری لنکا کے سابق کپتان سنگاکارا گڑھے مردے اکھاڑنے لگے

سری لنکا کے سابق کپتان سنگاکارا گڑھے مردے اکھاڑنے لگے
 سری لنکا کے سابق کپتان سنگاکارا گڑھے مردے اکھاڑنے لگے

  



کولمبو (مانیٹرنگ ڈیسک) سری لنکا کے سابق کپتان اور مایہ ناز بلے باز کمار سنگاکار نے 2009ء میں اپنی ٹیم کے دورہ پاکستان سے متعلق تحقیقات کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ سری لنکا ٹیم کو مناسب سیکیورٹی سہولیات کے بغیر ہی پاکستان بھیج دیا گیا تھا۔واضح رہے کہ لاہور میں دوسرے ٹیسٹ میچ کے دوران دہشت گردوں نے سری لنکن ٹیم پر حملہ کر دیا تھا جس کے نتیجے میں کئی کھلاڑی اور ٹیم انتظامیہ کے افراد زخمی ہوئے تھے۔ کمارسنگاکارا نے سری لنکا کرکٹ بورڈ کی انتظامیہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ’’انہوں نے 2009ء میں دورہ پاکستان کے دوران ہمارے تحفظ کی کوئی پرواہ نہ کی۔ وہاں کچھ بھی ہو، ان کے پاس کوئی گارنٹی نہیں تھی لیکن اس کے باوجود انہوں نے ہمیں بظاہر خودکش سفر پر بھیج دیا۔ انہوں نے دورہ سے پہلے سیکیورٹی سے متعلق ہمارے خدشات بھی نہیں سنے اور بالآخر یہ دورہ ہمارے کچھ لڑکوں کے شدید زخمی ہونے پر ختم ہوا۔‘‘انہوں نے مزید کہا کہ ’’ میرے جسم پر اب بھی ان زخموں کی خراشیں ہیں اور گولیوں کے اندرموجود چھروں کے لگنے سے آنے والے زخم موجود ہیں۔ میرا یقین ہے کہ اس بات کی تحقیقات کرنے کیلئے یہ بہترین وقت ہے کہ کیا اس دورے کی اجازت کھلاڑیوں کے تحفظ کو مدنظر رکھتے ہوئے دی گئی تھی۔کرکٹ سے متعلق معاملات کو میں ہمیشہ عزت دوں گا لیکن دیگر الزامات پر بات کرنے کیلئے میرے پاس وقت نہیں ہے۔‘‘

مزید : کھیل اور کھلاڑی