’ہمیں انسانی گوشت کھلایا جاتا تھا تاکہ ہماری شخصیت۔۔۔‘ قتل کے الزام میں پکڑے جانے والے 12 لڑکوں نے ایسا انکشاف کردیا کہ جان کرآپ کے بھی رونگٹے کھڑے ہوجائیں گے

’ہمیں انسانی گوشت کھلایا جاتا تھا تاکہ ہماری شخصیت۔۔۔‘ قتل کے الزام میں ...
’ہمیں انسانی گوشت کھلایا جاتا تھا تاکہ ہماری شخصیت۔۔۔‘ قتل کے الزام میں پکڑے جانے والے 12 لڑکوں نے ایسا انکشاف کردیا کہ جان کرآپ کے بھی رونگٹے کھڑے ہوجائیں گے

  



میکسیکوسٹی(مانیٹرنگ ڈیسک) میکسیکو میں پولیس نے ایک خطرناک گینگ سے تعلق رکھنے والے 12لڑکوں کو گرفتار کیا ہے جنہوں نے پولیس کے سامنے ایک ایسا خوفناک انکشاف کیا ہے کہ جان کر آپ کے رونگٹے کھڑے ہو جائیں گے۔ڈیلی سٹار کی رپورٹ کے مطابق جیلیسکو نیووا جینریشن کارٹل (Jalisco Nueva Generacion cartel) نامی گینگ سے تعلق رکھنے والے یہ لڑکے اب تک درجن سے زائد افراد کو بے دردی سے قتل کر چکے تھے۔ انہوں نے اعتراف کیا ہے کہ وہ جس بھی شخص کو قتل کرتے تھے، ان کے باس انہیں اس مقتول کا گوشت کھلاتے تھے تاکہ یہ مزید بے رحم اور سنگدل قاتل بن سکیں۔انہوں نے بتایا کہ وہ مقتولین کی لاشوں کو فریج میں رکھ دیتے اور اعضاءکاٹ کر کھاتے رہتے تھے۔

’گزشتہ برس مجھے کینسر تشخیص ہوگیا، روایتی علاج سے تنگ آکر میں بھارت چلی گئی، جہاں مجھے گائے کا پیشاب پلایا جاتا رہا اور پھر ۔۔۔‘ کینسر زدہ خاتون کے ساتھ پھر بھارت میں کیا کیا گیا؟ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

رپورٹ کے مطابق کئی افراد کو انہوں نے سر قلم کرکے ہلاک کیا اور متعدد مقتولین کی لاشیں بھی ٹکڑے ٹکڑے کر ڈالیں۔پراسیکیوٹرز کے مطابق تمام ملزم کم عمر لڑکے ہیں۔کچھ عرصہ قبل انہوں نے ایک فرم کے 5ملازمین کو قتل کر دیا تھا۔ ان میں سے تین کے سرقلم کیے گئے اور ان کی لاشوں کے ٹکڑے کر دیئے گئے تھے۔ اس بھیانک واردات کے بعد پولیس ان کی گرفتاری کے لیے چھاپے مار رہی تھی اور بالآخر انہیں میکسیکو کی ریاست تباسکو کے گاﺅں میں ایک گھر سے گرفتار کرنے میں کامیاب ہو گئی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...