این اے 142میں نون اور جنون میں کانٹے دار مقابلہ متوقع

این اے 142میں نون اور جنون میں کانٹے دار مقابلہ متوقع

اوکاڑہ(عبدالوحیدانصاری سے) حلقہ این اے142ضلع اوکاڑہ کی سیاست میں اہم کردار کاحامل حلقہ ہے،مسلم لیگ(ن) کی پوزیشن قدرے مستحکم جبکہ تحریک انصاف بھی سخت جدوجہد میں مصروف ہے، اس حلقے میںآرائیں،ملک،رحمانی،رائے ،راجپوت براریوں کی اکثریت ہے یہ حلقہ زیادہ تر شہری آبادی پر مشتمل ہے اس حلقہ میں کل ووٹروں کی تعداد4 لاکھ 21 ہزار 8 سو73ہے،جن میں مردووٹوں کی تعداد ایک لاکھ90ہزار6سو 78اور خواتین ووٹوں کی تعداد 2لاکھ 31ہزار ایک سو96ہے،گذشتہ انتخابات میں اس حلقہ سے زیادہ تر اُمیدوار آرائیں برادری اور راؤ برادری سے ہی انتخابات میں حصہ لیتے ہو ئے چلے آرہے ہیں، چونکہ اس حلقہ میں آرائیں اورراؤ برادی کی اکثریت ہے اس لئے اس حلقہ میں برادریوں کے ووٹ زیادہ تر انتخابی نتائج پر اثر انداز ہو تے ہیں،آرائیں برادری کاووٹ زیادہ تر مسلم لیگ(ن) اور راؤبرادری کازیادہ ترووٹ راؤ برادری کے اُمیدوار کے حق میں جاتاہے،اس حلقہ سے آرائیں برادری میاں یاورزمان(مرحوم) اورراؤ برادری راؤ سکندراقبال(مرحوم) دو،دو،تین ،تین بار کامیابی حاصل کرچکے ہیں، گذشتہ انتخابات کی طرح الیکشن2018میں بھی آرائیں برادری کے چوہدری ریاض الحق اور راؤ برادری کے راؤ حسن سکندر کے مابین سخت مقابلہ ہو نے کی توقع ہے یوں تواس حلقہ میں اوکاڑہ کی ایک سماجی شخصیت میاں عبدالرشید بھی قومی اسمبلی کے اُمیدوار کے طور پر آزاد حیثیت سے الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں، اوراپنے حمائیتوں کے ذریعے زور شعور سے اپنی انتخابی کمپئین شروع کئے ہو ئے ہیں گوکہ میاں عبدالرشید کی کامیابی کے امکان کم ہیں مگر ان ووٹ مسلم لیگ(ن) اور تحریک انصاف کے ووٹ پر اثرانداز ضرورہوں گے،ان کے علاوہ پاکستان پیپلزپارٹی نے بھی حلقہ این اے 142سے نواب طارق پٹھان کوقومی اسمبلی کاٹکٹ دے رکھا ہے نواب طارق پٹھان گوکہ سیاست میں نوواردہیں اور عوامی حلقوں میں اتنی پذیر ائی کے حامل نہیں مگر پیپلزپارٹی جوکہ ضلع اوکاڑہ میں ایک مضبوط پارٹی کے طور پر میدان سیاست میں رہی ہے،الیکشن2013میں پیپلزپارٹی کواوکاڑہ کی عوام نے یکسر مستر د کردیاتھا، 2013سے2018تک پیپلزپارٹی کے کسی سرکردہ لیڈر نے پارٹی کو سنبھالادینا تک گواہ نہیں کیاجس سے پیپلزپارٹی کا گراف دن بدن گرتا چلاگیا،آج پیپلزپارٹی اوکاڑہ میں چنددیرینہ کارکنوں کے سہارے جماعت کانام زندہ کئے ہو ئے ہیں پی پی کے اُمیدوار نواب طارق پٹھان گوکہ انتخابات میں ان رہنے اورپارٹی کا نام زندہ رکھنے کیلئے کارکنوں سے مل کر سخت جدوجہد کر رہے ہیں،مگر عوام نون اور جنون کا مقابلہ ہی دیکھنا چاہتے ہیں 11روز بعد آنے والا25جولائی کا دن عوام کا فیصلہ نون کے حق میں آتاہے یا جنون کے حق میں نون اور جنون انتخابی معرکہ کی زبردست تیاری میں مصروف ہیں جبکہ عوام فیصلے کا شد ت سے انتظار کر رہے ہیں۔

Ba

مزید : علاقائی