مستونگ میں جب سراج رئیسانی جلسہ گاہ میں خطاب کیلئے آئے تو وہاں موجود ممکنہ خود کش حملہ آور کا ”روز نامہ پاکستان“ نے سراغ لگا لیا

مستونگ میں جب سراج رئیسانی جلسہ گاہ میں خطاب کیلئے آئے تو وہاں موجود ممکنہ ...
مستونگ میں جب سراج رئیسانی جلسہ گاہ میں خطاب کیلئے آئے تو وہاں موجود ممکنہ خود کش حملہ آور کا ”روز نامہ پاکستان“ نے سراغ لگا لیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) سانحہ مستونگ کے ممکنہ خود کش حملہ آور کا سراغ مل گیا ، ممکنہ حملہ آور نے سراج رئیسانی پر دوران تقریر کس طرح قریب پہنچ کر خود کو اڑایا ،ملنے والی ویڈیو نے سارے راز کھول دیئے،ویڈیو میں ممکنہ حملہ آور کو خودکش جیکٹ پہنے سراج رئیسانی کی جانب بڑھتے ہوئے صاف دیکھا جا سکتا ہے ۔

تفصیلات کے مطابق ”ڈیلی پاکستان“ نے بلوچستان عوامی پارٹی کے مرکزی رہنما  نوابزادہ سراج رئیسانی سمیت 149معصوم بلوچوں کو شہید اور سینکڑوں کو زخمی کر نیوالے ممکنہ خود کش حملہ آور کا سراغ لگا لیا ہے ۔درینگڑھ میں ہونے والے خوفناک خود کش حملے سے  پونے چار منٹ پہلے کی تفصیلی ویڈیو میں جلسہ کے دوران سٹیج سیکرٹری کی جانب سے نوابزادہ سراج رئیسانی کو جب خطاب کیلئے سٹیج پر آنے کی دعوت دی جاتی ہے تو  پنڈال میں بیٹھے کارکنان  کھڑے ہو کر اپنے لیڈر کی آمد پر نعرے لگانا شروع کرتے ہیں ،سراج رئیسانی  ڈائس پر آکر ہاتھ ہلاکر کارکنوں کے استقبالیہ نعروں کا جواب دے کر  بسم اللہ سے اپنی تقریر کی ابھی تمہید  ہی باندھ رہے ہوتے ہیں تو اس دوران ان کی بائیں جانب سے  ایک  نوجوان شخص اچانک  رش کا فائدہ اٹھا کر سٹیج کی جانب بڑھتے ہوئے صاف دیکھا جا سکتا ہے ۔ اس شخص کی عمر 30 سے 35 سال کے قریب دکھائی دیتی ہے جبکہ شلوار قمیض پہنے اس ممکنہ حملہ آور نے ایک جیکٹ بھی  پہنی رکھی ہے جو  کمر  کی جانب سے ابھری ہوئی ہے اور اس کے بازو کے نیچےجیکٹ کی ایک سائیڈ بالکل واضح ہے اور بغل میں سے جیکٹ کے اندر لگا ممکنہ بارودی مواد بھی صاف نظر آرہا ہے ۔یہ ممکنہ حملہ  آور  جونہی سٹیج کے نیچے ڈائس کے سامنے سراج رئیسانی کے قریب پہنچتا ہے تو  پلک جھپکنے کے ساتھ ہی زور دار دھماکہ ہو جاتا ہے جس کے بعد ہر طرف لاشوں اور زخمیوں کے ڈھیر لگ جاتے ہیں۔ممکنہ حملہ  آور کی آمد ، کمر سے اُبھری ہوئی جیکٹ اور جیکٹ کے اندر چھپایا ہوا بارودی مواد ویڈیو میں 3منٹ 42سیکنڈ پر دیکھا جا سکتا ہے۔

واضح رہے کہ مستونگ خود دھماکے میں اب تک 149افراد شہید ہو چکے ہیں جبکہ سینکڑوں زخمی ہیں جن میں متعدد کی حالت تشویشناک ہے جس سے شہادتوں میں مزید اضافے کا خدشہ ہے ,مستونگ خود کش دھماکے کو پاکستان کی تاریخ کے چند بڑا سانحات میں شمار کیا جا رہا ہے۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔

مزید : قومی /اہم خبریں