آپریشنل ورکنگ سسٹم کو ماڈرن ٹیکنالوجی پر استوار کرنیکا سلسلہ جاری رکھا جائے: شعیب دستگیر

آپریشنل ورکنگ سسٹم کو ماڈرن ٹیکنالوجی پر استوار کرنیکا سلسلہ جاری رکھا ...

  

لا ہو ر (کر ائم رپو رٹر)انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب شعیب دستگیر نے کہاہے کہ معاشرے سے جرائم کا قلع قمع، مجرمان کو پابند سلاسل کرنے، عوامی شکایات کے بلاتاخیر ازالے اور سروس ڈلیوری میں مزید بہتری کیلئے جدید ٹیکنالوجی کا موثر استعمال وقت کی اہم ضرورت ہے چنانچہ پولیس کے آپریشنل ورکنگ سسٹم کونئے فیچرز اور جدید سافٹ وئیرز کے ساتھ ماڈرن ٹیکنالوجی پر استوار کرنے کا سلسلہ جاری رکھا جائے تاکہ عوام کی جان و مال کے تحفظ اور قانون کی حکمرانی برقرار رکھنے کا عمل بہتر سے بہتر ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ پولیس ٹیموں کی کارکردگی کو مزید بہتر بنانے کیلئے8787آئی جی پی کمپلینٹ سنٹر، پولیس اسٹیشن ریکارڈ مینجمنٹ، کریمنل ریکارڈ آفس، ہوٹل آئی، کرائم میپنگ اور مانیٹرنگ و سرویلنس سسٹم سمیت دیگر پراجیکٹس میں ضروریات کے پیش نظر نئے فیچرز کا اضافہ کیا جائے جبکہ فیلڈ سٹاف کے ساتھ ساتھ عوام کی جانب سے حاصل ہونے والے فیڈ بیک کی روشنی میں آئی ٹی پراجیکٹس کو مزید اپ گریڈ کیا جائے۔ انہوں نے مزیدکہاکہ صوبے کے تمام اضلاع میں درج مقدمات کی ڈیجیٹل مانیٹرنگ کی جائے اوراندراج مقدمہ سے عدالتی فیصلے تک تمام تفصیلات مرحلہ بہ مرحلہ سسٹم میں بروقت اپ لوڈ کی جائیں تاکہ آر پی او، ڈی پی او سے لے کر تمام سپروائزری افسران جب چاہیں مقدمہ کے حوالے سے ہر پیش رفت کو باآسانی چیک اور مانیٹر کر سکیں۔انہوں نے تاکیدکی کہ سٹریٹ کرائم کے سد باب کیلئے سیف سٹی کیمروں کے سرویلنس نظام اور پٹرولنگ فورسز کے باہمی کوارڈی نیشن کو مزید بہتر کیا جائے تاکہ وارداتوں میں ملوث پیشہ ور ملزمان کو گرفتار کرکے قانون کے کٹہرے میں جلد از جلد پیش کیا جاسکے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گز شتہ روزسنٹرل پولیس آفس میں آئی ٹی پراجیکٹس سے متعلق اجلاس کی صدارت کے دوران افسران کوہدایات دیتے ہوئے کیا۔

اجلاس کے دوران ایڈیشنل آئی جی آئی اے بی اظہر حمید کھوکھر نے آئی جی پنجاب کو 8787کمپلینٹ سنٹر کی سال رواں کے ابتدائی چھ ماہ کی مجموعی کارکردگی کے متعلق بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ رواں برس جنوری تا جون 2020کے دوران کل 50156 شکایات موصول ہوئیں ہیں، جن میں سے 44554 (89فیصد) حل ہو چکی ہیں۔بذریعہ کال موصول ہونے والی شکایات کی تعداد 32283 تھی جبکہ دیگر ذرائع سے مجموعی طور پر 17873شکایات موصول ہوئیں۔تحقیقات کے بعد9989 شکایات(٪22) جھوٹی ثابت ہوئیں جبکہ10153 (٪24) درخواست دہندگان نے پیروی سے انکار کر دیااور2581 (٪6) درخواست دہندگان کا آپس میں راضی نامہ ہو گیا۔ ایڈیشنل آئی جی آئی اے بی اظہر حمید کھوکھر نے مزید کہاکہ ایف آئی آر کے اندراج کیلئے موصول 31502شکایات میں سے29331کا ازالہ ہوا جبکہ2171شکایات ابھی زیر سماعت ہیں اسی طرح ناقص تفتیش اور تبدیلی تفتیش کیلئے موصول8877شکایات میں سے7364کا ازالہ ہوا جبکہ1513زیر سماعت ہیں جبکہ پولیس کے خلاف موصول6669شکایات میں سے5397کا ازالہ ہوا اور1272زیر سماعت ہیں۔ پولیس سروسز سے متعلق موصول شکایات کی تفصیلات بتاتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اس حوالے سے شہریوں نے912شکایات درج کروائیں جن میں سے 806کا ازالہ ہوا جبکہ106ابھی زیر سماعت ہیں۔ فورس کے محکمانہ مسائل سے متعلق موصول416شکایات میں سے269کا ازالہ ہوا جبکہ147زیر سماعت ہیں۔ دیگر عوامی مسائل کے حوالے سے موصول1780 شکایات میں سے1387کا ازالہ ہوا جبکہ393زیر سماعت ہیں۔ پاکستان سٹیزن پورٹل (PMDU) کے ذریعے موصول 129119 شکایات میں سے122444 کا ازالہ ہواجبکہ 6675 زیر سماعت ہیں۔ ڈی آئی جی آئی ٹی وقاص نذیر نے آئی جی پنجاب کو آئی ٹی پراجیکٹس کی اپ گریڈیشن کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ شہریوں کو سہولیات کی فراہمی اور پولیس کے ورکنگ سسٹم کو مزید فعال کرنے کیلئے متعدد پراجیکٹس پر کام جاری ہے تاکہ دستیاب وسائل کے بہترین استعمال کے ساتھ پولیس ورکنگ میں مزید تیزی اور شفافیت آسکے۔ آئی جی پنجاب نے 8787آئی جی پی کمپلنٹ سنٹر کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے کہاکہ فرنٹ ڈیسک، خدمت مراکز اور 8787کمپلینٹ سسٹم پر موصول ہر درخواست کوطے شدہ ایس او پیز کے مطابق ٹائم فریم کے اندر حل کیا جائے تاکہ شہریوں کو انصاف کی فراہمی کا عمل مزید بہتر ہوسکے۔ اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی آئی اے بی اظہر حمید کھوکھر، ایم ڈی سیف سٹی ایڈیشنل آئی جی راؤ سردار،ایڈیشنل آئی جی ٹریننگ شاہد حنیف، ایڈیشنل آئی جی اسٹیبلشمنٹ بی اے ناصر،ایڈیشنل آئی جی انویسٹی گیشن فیاض احمد دیو، ایڈیشنل آئی جی سی ٹی ڈی محمد طاہر رائے، ڈی آئی جی لیگل جواد احمد ڈوگر،ڈی آئی جی چیف ایڈمن آفیسرسیف سٹی کامران خان، ڈی آئی جی آپریشنز سہیل اختر سکھیر، ڈی آئی جی آئی ٹی وقاص نذیرا اوراے آئی جی مانیٹرنگ اینڈ انیلیسس عثمان اعجاز باجوہ سمیت دیگر افسران بھی موجود تھے۔

مزید :

علاقائی -