بڑی توند والے مردوں کے لیے باپ بننا مشکل، سائنسدانوں نے وارننگ دے دی

بڑی توند والے مردوں کے لیے باپ بننا مشکل، سائنسدانوں نے وارننگ دے دی
بڑی توند والے مردوں کے لیے باپ بننا مشکل، سائنسدانوں نے وارننگ دے دی

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) موٹاپا جان کا دشمن ہے جس کا اب سائنسدانوں نے باپ بننے کے خواہش مند مردوں کے لیے بھی ایک تشویشناک نقصان بتا دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق ہارورڈ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ جو مرد موٹاپے کا شکار ہو اور اس کا پیٹ بڑھا ہوا ہو، اس کے باپ بننے کا امکان 50فیصد تک کم ہو جاتا ہے کیونکہ موٹاپا مردوں میں ایسا کیمیکل پیدا کرتا ہے جو ان کے مردانہ جنسی ہارمون ٹیسٹاسٹرون کو زنانہ جنسی ہارمون ایسٹروجن میں تبدیل کرتا ہے۔

تحقیقاتی نتائج میں سائنسدانوں کا کہنا تھا کہ ”مرد کی کمر او رپیٹ پر ہر ایک اضافی انچ چربی اس کے باپ بننے کے امکان میں 10فیصد کمی کرتی ہے۔“تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر چارلس کنگزلینڈ کا کہنا تھا کہ ”جن مردوں کے پیٹ کی شکل ہانڈی نما (Pot belly)ہو، ان کو سب سے زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔ جن مردوں کی کمر 40انچ تک بڑھ جائے ان کے باپ بننے کا امکان 32انچ کمر والے مردوں کی نسبت ایک تہائی کم ہو جاتا ہے۔چنانچہ موٹاپے کے شکار جن مردوں کو باپ بننے میں دشواری کا سامنا ہے انہیں اپنے وزن میں کمی لانے پر توجہ دینی چاہیے۔“

مزید :

تفریح -