مختلف الزامات کے تحت 2 انسپکٹروں سمیت 6تھانیداروں کو معطلی اور دیگر سزائیں

مختلف الزامات کے تحت 2 انسپکٹروں سمیت 6تھانیداروں کو معطلی اور دیگر سزائیں

لاہور(کر ائم سیل)قائم مقام ڈی آئی جی انویسٹی گیشن رانا ایاز سلیم نے آرڈرلی روم میں2 انسپکٹروں سمیت 6تھانیداروں کو مختلف الزامات کے تحت جاری شوکاز نوٹسز کے جوابات سنتے ہوئے فرائض میں غفلت ، کرپشن، اختیارات سے تجاوز اور ناقص تفتیش پر عہدوں میں تنزلی ،سروس کی ضبطگی اور معطلی سمیت متعددسزائیں دی ہیں ۔تفصیلات کے مطابق اُنہوں نے انویسٹی گیشن ہیڈ کوارٹر کے سب انسپکٹر محمد اصغر کو شاہدرہ میں اپنی سابقہ تعیناتی کے دوران قتل کے مقدمہ میں ملوث ملزموں کی گرفتاری میں ناکام رہنے، کرپشن اور فرائض سے غفلت کے الزامات پر اس کے عہدے میں دو سٹیج کی کمی کرتے ہوئے سب انسپکٹر سے ہیڈ کانسٹیبل بنا دیا ہے۔ انویسٹی گیشن اُولڈ انار کلی کے سب انسپکٹر محمد شکور کو ناقص تفتیش، کرپشن اور اختیارات سے تجاوزکے مختلف الزمات پر عہدے میں تنزلی کرتے ہوئے سب انسپکٹر سے اے ایس آئی بنانے کے بعد معطل کر دیا ہے۔انچارج انویسٹی گیشن لوہاری گیٹ انسپکٹر محمد اسلم، انچارج انویسٹی گیشن شاہدرہ انسپکٹر رحمت علی کو ناقص کارکردگی اور ملزموں کو گرفتار کرنے میں ناکامی پر ان کی دو دو سال کی سروس ضبطگی کی سزا دی ہے ۔ قتل کے ملزموں کی گرفتاری میں ناکامی پر انویسٹی گیشن شاہدرہ کے سب انسپکٹر محمد عنایت کی دو سال کی سروس ضبط کرنیکی سزا دی ہے جبکہ انویسٹی گیشن نواب ٹاؤن کے سب انسپکٹر لیاقت علی کو قتل کے مقدمہ میں ناقص تفتیش پر اس کی معطلی کے احکامات جاری کیے ہیں۔علاوہ ازیں قائم مقام ڈی آئی جی انویسٹی گیشن رانا ایاز سلیم نے مختلف الزامات کے تحت ملازمت سے برطرف ہونے والے پولیس اہلکاروں کی اپیلوں کے جوابات سنتے ہوئے برطرف سب انسپکٹر بشیر عاصم، اے ایس آئی استخار احمد، اے ایس آئی بدر منیر، کانسٹیبل بابر خالد اور ڈرائیور کانسٹیبل سفیان الرحمان کی اپیلیں منظور کرتے ہوئے انہیں ملازمت پر بحال کر دیاہے۔

مزید : علاقائی