بلوچستان کے 2فراری کمانڈروں نے 57ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دیے

بلوچستان کے 2فراری کمانڈروں نے 57ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دیے

 کوئٹہ (خصوصی رپورٹ) بلوچستان کے دو فراری کمانڈرز نے 57 ساتھیوں سمیت سینئر صوبائی وزیر ثناء اللہ زہری کی موجودگی میں ہتھیار ڈال دیے۔ فراری کمانڈر عبیداللہ عرف ببرک اور دین جان عرف میر حسنی کے ساتھ ان کے 57 ساتھیوں نے بھی اس موقع پر اپنے ہتھیار ثناء اللہ زہری کے حوالے کئے اور قومی دھارے میں شامل ہو گئے۔ ہتھیار ڈالنے والے فراری کمانڈر عبیداللہ عرف ببرک کا کہنا تھا کہ ملک دشمن انہیں آزادی کے نام پر اندھیروں میں دھکیلتے ہیں، انہوں نے پرامن بلوچ شہری کے طور پر زندگی گزارنے کا وعدہ کیا۔ انہوں نے تربت میں بیس مزدوروں کے قتل کی بھی مذمت کی۔ دین جان عرف میر نے کہا کہ وہ اب قومی دھارے میں شامل ہو کر ملک کی ترقی کے لئے کام کریں گے۔ اس موقع پر ثناء اللہ زہری نے کہا کہ لوگوں کو بہکا کر پہاڑوں پر بھیجا جاتا ہے۔ بلوچ نوجوان بیرونی طاقتوں کے بہکاوے میں نہ آئیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ناراض بلوچ پہاڑوں سے واپس آجائیں انہیں خوش آمدید کہیں گے۔ واضح رہے کہ گزشتہ روز بھی بلوچ کالعدم مزاحمتی تنظیموں کے کمانڈروں شکاری مری اور مدینہ مری نے اپنے ساتھیوں سمیت ہتھیار ڈال دئیے تھے۔

مزید : صفحہ اول