ہائی کورٹ :کیا نیب بینک نادہندوں کے خلاف کارروائی کرسکتا ہے ،ڈویژن بنچ نے معاملہ فل بنچ کو بھجوادیا

ہائی کورٹ :کیا نیب بینک نادہندوں کے خلاف کارروائی کرسکتا ہے ،ڈویژن بنچ نے ...
ہائی کورٹ :کیا نیب بینک نادہندوں کے خلاف کارروائی کرسکتا ہے ،ڈویژن بنچ نے معاملہ فل بنچ کو بھجوادیا

  

لاہور (نامہ نگار خصوصی) لاہو رہائیکورٹ نے نیب آرڈیننس کی قانونی حیثیت کے خلاف فل بنچ تشکیل دینے کی سفارش کرتے ہوئے درخواستیں چیف جسٹس کو ارسال کر دیں، نیب آرڈیننس کے خلاف فل بنچ کے لئے بھجوائی گئی درخواستوں کی تعداد 100سے تجاوز کر گئی۔مسٹرجسٹس محمود مقبول باجوہ اور مسٹر جسٹس فرخ گلزار اعوان پر مشتمل دو رکنی بنچ نے چودھری محمد قاسم سمیت تین شہریوں کی درخواستوں پر سماعت شروع کی تو درخواست گزاروں کے وکلاءنے موقف اختیار کیا کہ بینکوں سے لئے گئے قرضوں کی وصولی اور عدم وصولی سے متعلق مقدمہ بازی ٹرائل کورٹ میں زیر التواء ہوتو قومی احتساب بیورو کسی فریق کے خلاف کارروائی نہیں کر سکتا مگر اس کے باوجود نیب نے درخواست گزار چودھری قاسم کے خلاف نب بینک جبکہ عدنان علی اور آصف محمود کے خلاف پنجاب بنک کی درخواستوں پر کارروائی شروع رکھی ہے جو غیرقانونی ہے.

انہوں نے استدعا کی کہ نیب آرڈیننس کی دفعہ 5،9 اور 19کو فنانشل ریکوری آرڈیننس سے متصادم قرار دیا جائے ، نیب کے ایڈیشنل ڈپٹی پراسکیوٹر جنرل عارف محمود رانا کی طرف سے بنچ کو بتایا گیا کہ نیب آرڈیننس کی قانونی حیثیت سے متعلق پہلے بھی 100 سے زائد درخواستیں فل بنچ کو بھجوائی جا چکی ہیں، اس معاملے کو بھی فل بنچ کے لئے بھجوایا جائے ، دو رکنی بنچ نے وزارت قانون اورچیئرمین نیب کو نوٹس جاری کرتے ہوئے نیب آرڈیننس کی قانونی حیثیت کے خلاف فل بنچ تشکیل دینے کی سفارش کرتے ہوئے درخواستیں چیف جسٹس کو ارسال کر دیں۔

مزید : لاہور