طالبات کو جنسی ہراساں کرنے والے اسسٹنٹ پروفیسر آصف سلیم کی برطرفی کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ

طالبات کو جنسی ہراساں کرنے والے اسسٹنٹ پروفیسر آصف سلیم کی برطرفی کے خلاف ...
طالبات کو جنسی ہراساں کرنے والے اسسٹنٹ پروفیسر آصف سلیم کی برطرفی کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی )لاہور ہائیکورٹ نے طالبات کو جنسی ہراساں کرنے والے اسسٹنٹ پروفیسر آصف سلیم کی برطرفی کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔

سانحہ ماڈل ٹاﺅن کی جوڈیشل انکوائری کو منظر عام پر لانے کی درخواستیں 3برسوں سے فیصلے کی منتظر

جسٹس ساجد محمود سیٹھی نے آصف سلیم کی درخواست پر سماعت کی، درخواست گزار کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا کہ یونیورسٹی آف لاہور نے جھوٹا الزام لگا کر درخواست گزار کو ملازمت سے برطرف کر دیا، یونیورسٹی انتظامیہ نے خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف قانون کے تحت سزا سنائی اور یونیورسٹی انتظامیہ نے برطرفی سے قبل شنوائی کا موقع نہیں دیا، یونیورسٹی کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ یونیورسٹی نے باقاعدہ انکوائری کرکے اسسٹنٹ پروفیسر کو نکالا، طالبات نے انکوائری میں اسسٹنٹ پروفیسر پر جنسی طور پر ہراساں کرنے کا بیان بھی دیا،عدالت نے دونوں فریقین کے دلائل سننے کے بعد اسسٹنٹ پروفیسر کی برطرفی کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیاہے۔

مزید :

لاہور -