پنجاب کے بیشتر اضلاع میں کنٹریکٹ اساتذہ کو تاحال ریگولر نہ کیا جا سکا، رانا لیاقت

پنجاب کے بیشتر اضلاع میں کنٹریکٹ اساتذہ کو تاحال ریگولر نہ کیا جا سکا، رانا ...

  

لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)پنجاب ٹیچرز یونین کے مرکزی جنرل سیکرٹری رانا لیاقت علی نے کنٹریکٹ اساتذہ کو درپیش مسائل پر ایڈیشنل سیکرٹری سکولز پنجاب محمد اختر سے ملاقات کی اور انہیں کنٹریکٹ اساتذہ میں پائی جانے والی پریشانی و اضطراب سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ پنجاب کے بیشتر اضلاع میں کنٹریکٹ اساتذہ کو ابھی تک ریگولر نہیں کیا جا سکا۔ 2012میں پانچ سالہ کنٹریکٹ پر تعینات ہونے والے ایجوکیٹرز کو 3سال میں پیشہ ورانہ تعلیمی قابلیت (بی۔ایڈ) مکمل کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔ ان میں سے 90% ایجوکیٹرز نے بی ۔ایڈ مقررہ مدت میں کر لیا ہے چند ایک کا تین سال گزرنے کے بعد رزلٹ آیا ہے اور کچھ نے تا حال بی ۔ایڈ کا امتحان دے رکھا ہے یا دینے کی تیاری میں ہیں۔ اب کیونکہ پانچ سالہ کنٹریکٹ کی مدت مکمل ہونے کو ہے جس پر ضلعی افسران ان کو ملازمت سے فارغ کرنے کا عندیہ دے رہے ہیں۔اوربعض کی تنخواہیں بھی بند ہو چکی ہیں جو کہ سراسر زیادتی و نا انصافی ہے۔

ماضی میں بھی مقررہ مدت میں بی۔ایڈ مکمل نہ کرنے والے اساتذہ کو اضافی وقت دیا گیا جبکہ ان کے 2012کے کنٹریکٹ پالیسی میں بھی مزید پانچ سال کی توسیع دینے کی شق موجود ہے۔ لہذا پانچ سالہ تدریسی تجربہ کے حامل اساتذہ کو ملازمت سے برطرف کرنے کی بجائے ان کنٹریکٹ اساتذہ کے کنٹریکٹ میں مزید پانچ سال کی توسیع اور پیشہ ورانہ تعلیمی قابلیت بی۔ایڈ کے لئے بھی مزید وقت دیا جائے ۔جس پر ایڈیشنل سیکرٹری سکولز پنجاب نے کنٹریکٹ اساتذہ کے معاملات کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کی یقین دہانی کرواتے ہوئے کہا کہ پیشہ ورانہ تعلیمی قابلیت کے مقررہ وقت میں توسیع کے لئے جلد لیٹر جاری کر دیا جائے گا۔کسی بھی کنٹریکٹ ٹیچر کو اس بنا پر ملازمت سے فارغ نہیں کیا جائے گا۔ 2009 سے تا حال ریگولر نہ ہوسکنے والے اساتذہ کو بھی جلد ریگولر کروانے کے لئے حکمت عملی بنائی جائے گی۔تمام اضلاع سے کنٹریکٹ اساتذہ کی ریگولرائزیشن سے متعلق معلومات طلب کر لی گئی ہیں۔ بروقت ریگولر ائزیشن مکمل نہ کرنے والے افسران کے خلاف ایکشن لیا جائے گا اور کاروائی ہوگی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -