’مجھے چار سال پہلے داعش نے اغواءکیا تھا اور اغواءکرتے ہی مجھے ایک بازار میں لیجایا گیا جہاں بہت سارے مرد موجود تھے، انہوں نے مجھے۔۔۔‘ داعش کی قید سے فرار ہونے والی نوجوان لڑکی نے اپنی قید کی ایسی کہانی سنادی کہ جان کر آپ بھی کانپ اُٹھیں گے

’مجھے چار سال پہلے داعش نے اغواءکیا تھا اور اغواءکرتے ہی مجھے ایک بازار میں ...
’مجھے چار سال پہلے داعش نے اغواءکیا تھا اور اغواءکرتے ہی مجھے ایک بازار میں لیجایا گیا جہاں بہت سارے مرد موجود تھے، انہوں نے مجھے۔۔۔‘ داعش کی قید سے فرار ہونے والی نوجوان لڑکی نے اپنی قید کی ایسی کہانی سنادی کہ جان کر آپ بھی کانپ اُٹھیں گے

  


بغداد(مانیٹرنگ ڈیسک) داعش نے شام و عراق میں دیہات پر حملے کر کے سالوں پہلے کئی کردخواتین کو جنسی غلام بنا لیا تھا۔ ان میں سے جب کوئی خاتون کسی طرح شدت پسندوں کے چنگل سے بھاگ کر آنے میں کامیاب ہوتی ہے تو ظلم و بربریت کی ایک نئی داستان سناتی ہے۔ اب ایک اورآزاد ہونے والی لڑکی نے اپنی ایسی بپتا سنائی ہے کہ ہر سننے والا لرز اٹھے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق 24سالہ 4بچوں کی ماں نورا خلف نامی اس لڑکی کو عراق میں واقع اس کے گاﺅں سے اغواءکرکے شام لیجایا گیا جہاں اسے بارہا منڈیوں میں جنسی غلام کے طور پر فروخت کیا گیا۔کرد جنگجوﺅں نے گزشتہ دنوں اسے کئی سال کی تکلیف سے نجات دلائی ہے اور داعش کے چنگل سے رہا کروایا ہے۔

داعش کے رہنما کا خفیہ پیغام پکڑا گیا، رمضان المبارک کے پہلے 15 دن بڑے بڑے شہروں میں قیامت برپا کرنے کے بعد اب کیا کرنے والے ہیں؟ ایسی خبر آگئی کہ دنیا لرز کر رہ گئی

نوراخلف نے واپس آنے کے بعد بتایا ہے کہ ”مجھے اغواءکرنے کے بعد شام لیجایا گیا اور شدت پسند وہاں مجھے دیگر لڑکیوں کے ساتھ ایک بازار میں لے گئے۔ وہ بازار خاص طور پر خواتین کو فروخت کرنے کے لیے لگتا تھا۔ وہاں سینکڑوں لڑکیاں فروخت کے لیے پیش کی گئی تھیں۔ مرد وہاں آتے اور جو لڑکی انہیں پسند آتی، اس کی قیمت ادا کرکے اسے ساتھ لے جاتے تھے۔ شدت پسندوں نے مجھے اسی طرح 5مرتبہ فروخت کیا۔ میرا پانچواں خریدار ایک روز اپنا موبائل فون گھر بھول گیا جس کے ذریعے میں نے اپنے بھائی سے رابطہ کر لیا۔ میرے بھائی نے کرد ملیشیاءسے رابطہ کیا اور میرا پتا انہیں دیا۔ یوں میری رہائی کی راہ ہموار ہوئی۔“

مزید : بین الاقوامی


loading...