ہوسکتا ہے آئندہ سال اسمبلی اپنی مدت پوری نہ کر پائے اور تحلیل ہوجائے ، سندھ کے لوگ پہلے بھی پیپلزپارٹی کے ساتھ تھے آئندہ بھی رہیں گے:سید مراد علی شاہ

ہوسکتا ہے آئندہ سال اسمبلی اپنی مدت پوری نہ کر پائے اور تحلیل ہوجائے ، سندھ ...
ہوسکتا ہے آئندہ سال اسمبلی اپنی مدت پوری نہ کر پائے اور تحلیل ہوجائے ، سندھ کے لوگ پہلے بھی پیپلزپارٹی کے ساتھ تھے آئندہ بھی رہیں گے:سید مراد علی شاہ

  


کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ بجٹ پر بات کرنے پر میں 100 واں سپیکر ہوں ،بجٹ پر  ایم کیو ایم کے 24ممبرز بولے اور  پیپلزپارٹی کے 60ممبرز نے تقاریر کیں، آئندہ سال ہوسکتا ہے اسمبلی اپنی مدت پوری نہ کر پائے اور تحلیل ہوجائے ،سندھ کے لوگ پہلے بھی پیپلزپارٹی کے ساتھ تھے اور آئندہ بھی رہیں گے ،سندھ کے لوگوں کو بے وقوف بنانے کی کوشش کی جارہی ہے،جن لوگوں کو کچھ دن کے لئے بے وقوف بنایا گیا تھا وہ اب سمجھ گئے ہیں، میں ان کو لوگوں کو بتانا چاہتا ہوں کہ اب سندھ کے لوگ بے وقوف بننے والے نہیں ہیں۔

وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے گفتگو کر کرتے ہوئے کہا کہ تنقید اچھی بات نہیں ہے، میں تنقید سننے کے لئے بیٹھا ہوں لیکن اپوزیشن نے بیجا تنقید کی ،یہ بات غلط ہے کہ ٹیکس کراچی سے لیتے ہیں اور یہاں خرچ نہیں کرتے۔انہوں نے کہا کہ آپ تنقید کریں،لیکن اچھی باتوں کو سراہا  بھی کریں،آپ نے جس کو لیڈر بنایا اس نے ملک کیا دیا ؟ہمارے لیڈر نے دکھ کی گھڑی میں بھی پاکستان کھپے کا نعرہ لگایا ۔انہوں نے خواجہ اظہار کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے سندھیوں کی پاکستان کے لئے قربانیاں بھول کر زیادتیاں کی ،آپ جب یہاں آئے توسندھیوں نے آپ کو سینے سے لگایا ،سندھ پاکستان بننے سے پہلے صدیوں سے موجود تھا ،آپ قائد اعظم محمد علی جناح کو بھی بھول گئے ہیں، پیپلز پارٹی نے لوڈشیڈنگ کے معاملے پر ہر شہر میں احتجاج کیا تھا ۔انہوں نے  کہا کہ مئیر کراچی وسیم اختر میرے پاس آتے رہے ہیں، میں نے ان سے کہا جاری سکیموں اور ترقیاتی منصوبوں  پر توجہ دیں ،تاکہ ان کو مکمل کیا جاسکے،انہوں نے کہا کہ سندھ کا بجٹ  دوسرےصوبوں کے مقابلے میں بہتر ہے۔

مزید : قومی


loading...