پانی بحران، وزیر بلدیات سعید غنی مستعفی ہو جانا چاہئے،آفتاب صدیقی

پانی بحران، وزیر بلدیات سعید غنی مستعفی ہو جانا چاہئے،آفتاب صدیقی

کراچی (اسٹاف رپورٹر)پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما و رکن قومی اسمبلی آفتاب صدیقی نے کہا ہے کہ سعید غنی کہتے ہیں کراچی میں پانی کے مسلے کا فوری حل نہیں،میں پوچھتا ہوں کیا سعید غنی نو ماہ پہلے منتخب ہوئے؟ سعید غنی کی حکومت گیارہ سالوں سے سندھ پر برسراقتدار ہے۔نااہل وزیر بلدیات سعید غنی مستعفی ہو جانا چاہئے۔یہ احتجاج ابھی صرف ٹریلر ہے پوری فلم دکھانا باقی ہے۔ یہ باتیں انہوں نے واٹر بورڈ کے مرکزی دفتر کے باہر اپنے حلقہ NA-247میں پانی کی قلت کے خلاف احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کہیں۔ احتجاجی مظاہرے میں پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی رہنما و رکن سندھ اسمبلی خرم شیر زمان، رکن سندھ اسمبلی شہزاد قریشی، رکن سندھ اسمبلی رمضان گھانچی اور دیگر پارٹی رہنما و کارکنان سمیت علاقہ مکینوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔ آفتاب صدیقی کا مزید کہنا تھا کہ کراچی کا پانی ضائع ہورہا ہے،حب ڈیم پانی اے بھر چکا ہے لیکن پانی جاکہاں رہاہے۔پانی کی غیر منصفانہ تقسیم کی جارہی ہے۔ 1998 کے تحت واٹر بورڈ کو 9 ملین گیلن پانی فراہم کرنا تھا سی بی سی کو، لیکن ابھی صرف تین ملین گیلن دیا جارہاہے۔ یہ ایک پر امن مظاہرہ ہے لیکن اگر انہیں اسکا مطلب سمجھ نہ آیا تو پھر بتائیں گے کہ کیسے احتجاج ہوتا ہے۔مطالبہ کرتے ہیں کہ واٹر بورڈ کا تھرڈ پارٹی آڈٹ کرایا جائے۔ وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ سندھ میں مداخلت کرے۔ سندھ حکومت اٹھارویں ترمیم کا ناجائز فائدہ اٹھارہی ہے۔اس موقع پر پی ٹی آئی رہنما خرم شیر زمان کا کہنا تھا کہ سعید غنی نے واٹر بورڈ کو کرپشن اور اقرباء پروری کی نظر کردیا ہے۔ واٹر بورڈ نے کراچی کو زبردستی پانی سے محروم رکھا ہوا ہے۔ واٹر بورڈ نے سی بی سی اور ڈی ایچ اے سے کئے جانے والے معاہدوں کی خلاف ورزی کی ہے۔ ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت کراچی کے شہریوں کو سزا دی جارہی ہے۔ اگر حکومت سندھ نے کراچی کو اس کا حق نہیں دیا تو ہم احتجاج کو وزیر اعلیٰ ہاوس لے کر جائیں گے۔ حکومت سندھ کے لئے بہتری اسی میں ہے کہ وہ کراچی میں پانی کے مسئلے کو فوری طور پر حل کرے۔ احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے رکن سندھ اسمبلی شہزاد قریشی کا کہنا تھا کہ اگر ہم اسی طرح اپنے حق کے لیے نکلتے رہے تو اندر بیٹھے لوگ ہم سے ہمارا پانی نہیں لے سکیں گے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر