مقبوضہ کشمیر میں کورونا تیزی سے پھیلنے لگا، 98فیصد آبادی کو خطرہ لاحق، ڈاکٹرز کا انکشاف

  مقبوضہ کشمیر میں کورونا تیزی سے پھیلنے لگا، 98فیصد آبادی کو خطرہ لاحق، ...

  

سرینگر (این این آئی)مقبوضہ جموں و کشمیر میں ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کشمیر نے کہا ہے کہ وادی کشمیر میں 98 فیصد آبادی کورونا وائرس کے شکار ہونے کا خدشہ ہے۔ڈی اے کے صدر ڈاکٹر نثار الحسن نے کہا کہ وادی کی صرف دو فیصد آبادی کوروناانفیکشن سے محفوظ ہے۔ آئی سی ایم آر کے ذریعہ وادی کشمیر کے ضلع پلوامہ میں مئی کے مہینے میں کیے گئے ایک سروے سے انکشاف ہوا کہ سروے کی گئی 2 فیصد آبادی نے اپنے خون میں اینٹی باڈیز دکھائی ہیں۔جس کا مطلب یہ ہے کہ اس شخص کو حالیہ عرصے میں انفیکشن ہوا تھا اور اب وہ وائرس سے محفوظ ہے۔ڈاکٹر نثار نے بتایا کہ اس تحقیق سے پتا چلا ہے کہ زیادہ تر لوگ اس بیماری سے محفوظ نہیں ہیں۔ اگرچہ حکومت نے معاشی سرگرمیاں دوبارہ کھول دی ہیں اور لاک ڈان کو ختم کردیا ہے اور زیادہ تر آبادی اس بیماری کا شکار ہے تاہم تمام پابندیوں کا اچانک خاتمہ ایک دو دھاری تلوار ہوسکتا ہے۔ یاد رہے کہ مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ 24 گھنٹے سے بھی کم وقت میں کورونا وائرس سے مزید پانچ افراد جاں بحق ہوگئے جس سے علاقے میں وبا کے باعث اموات کی مجموعی تعداد 60 ہوگئی ہے۔ ایک شخص کی موت جموں میں جبکہ باقی چار افراد کی موت وادی کشمیرمیں ہوئی ہے۔ سرینگر میں سینے کے امراض کے ہسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر سلیم ٹاک نے بتایاکہ گردے کے دائمی مرض میں مبتلا اس 85 سالہ شخص کو کل ایس ایم ایچ ایس ہسپتال سے منتقل کیا گیا تھا جو کورونا وائرس سے متاثر تھا۔ اس سے پہلے جموں کے گاندھی نگر سے تعلق رکھنے والے ایک 69 سالہ شخص کی کورونا وائرس کی تشخیص کے دو ہفتے بعد اتوار کو گورنمنٹ میڈیکل کالج جموں میں انتقال ہوگیا۔ ضلع سرینگر میں ابھی تک وائرس کی وجہ سے سب سے زیادہ 14 اموات ہوئیں۔ اس کے بعد بارہمولہ 11، کولگام 8، اسلام آباد اور شوپیان پانچ پانچ جموں 4، کپواڑہ 4، پلوامہ اور بڈگام دو دوجبکہ بانڈی پورہ،ڈوڈہ، ادھم پور، راجوری اور لیہ اضلاع میں ایک ایک شخص کی موت ہوئی ہے۔ مقبوضہ کشمیر میں ہفتے کی رات تک کوروناوائرس سے مجموعی طور پر5315 افرد متاثر ہوئے تھے جن میں سے تین ہزار743 وادی میں ایک ہزار135 جموں ڈویژن میں اور 437 لداخ خطے میں ہیں۔

مقبوضہ کشمیر کورونا

مزید :

صفحہ اول -