ملک میں آج بھی 1856 کے قوانین رائج ہیں،ثانیہ سعید

ملک میں آج بھی 1856 کے قوانین رائج ہیں،ثانیہ سعید

  

لاہور(فلم رپورٹر)سینئر اداکارہ ثانیہ سعید نے کہا کہ جو غصہ ظلم اور زیادتی کے خلاف ہے وہ مقدس ہے اسے ضائع نہیں کرنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ یہاں آج بھی 1856 کے قوانین رائج ہیں جو اس وقت کے حاکموں کیلئے بنائے گئے تھے لیکن آج ہم جمہوری معاشرے میں ہیں تو بھی انہی قوانین کا اطلاق ہوتا ہے،اگر ان میں تھوڑی بہت ترامیم بھی کی گئی ہیں تو اس سے بہتری آنے کی بجائے بیگاڑ پیدا ہوا ہے۔انہوں نے کہا ہے کہ اگر ہم نے اپنے معاشرے سے عدم برداشت کو ختم کرنا ہے تو ہمیں دوسروں کی بجائے اپنی تربیت کرنا ہو گی۔

، سکول میں بیس بال کھیلتی تھی اور میری کلاس فیلوز آج بھی جب ملتی ہیں تو مجھے کپتان کہتی ہیں،میں بچوں کی مختلف زبانوں کی کتابوں کا ترجمہ کرتی تھی اور انہیں رضا کارانہ پڑھاتی بھی رہی ہوں۔ ثانیہ سعید نے کہا کہ میں بہت غصے والی ہوں اور میں اپنے والد سے کہتی تھی میں اپنی اس عادت کو کیسے بدلوں جس پر انہوں نے کہا کہ آپ اپنے غصے کی عادت کو کیوں بدلنا چاہتی ہو آپ اس عادت کو بدلنے کی بجائے اسے استعمال کرو۔

مزید :

کلچر -