خوراک کی فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے احکامات جاری کر دیئے ہیں:سید ناصر شاہ

خوراک کی فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے احکامات جاری کر دیئے ہیں:سید ناصر شاہ

  



کراچی(سٹاف رپورٹر) سندھ کے وزیر برائے اطلاعات، بلدیات، ہاؤسنگ, ٹاؤن پلاننگ،جنگلات و جنگلی حیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ اگرچہ فی الحال صورتحال مکمل قابو میں ہے لیکن وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے ناگہانی یا ہنگامی صورتحال میں خوراک کی تواتر سے فراہمی کو یقینی بنانے کیلئے احکامات جاری کردیئے ہیں۔ یہ احکامات اس لئے جاری کئے گئے ہیں تاکہ اگر کوئی ایسی صورتحال رونما ہو جائے جیسا کہ دنیا کے دیگر ممالک جن میں کرونا وائرس کے مریضوں کی تعداد میں مسلسل اضافے سے پید ا ہوگئی ہے اور جو فوری کاروائی کی متقاضی ہو تو صوبے کے لوگوں کو خوراک کے حوالے سے کوئی مشکل پیش نہ آئے اور انہیں فوری طور پر کھانے پینے کی اشیاء پہنچائی جا سکیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہفتے کے روز وزیر اعلیٰ سندھ کے زیر صدارت ہونے والے اجلاس کے بعد میڈ سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں صوبائی وزراء اور وزیر اعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی و مشیروں کے علاوہ صوبے بھر کے کمشنروں نے شرکت کی۔اجلاس میں کرونا وائرس کے باعث پیدا ہونے والی صورتحال سے نمٹنے کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان کے زیر صدارت ہونے والے وزراء اعلیٰ کے اجلاس میں جو فیصلے کئے گئے ان کو عملی جامہ پہنانے کے حوالے سے بھی اجلاس میں تفصیلی غور و خوص کیاگیا۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ اس کے حوالے سے سندھ حکومت نے خود اپنی بھی صحت سے متعلق اصلاحات بھی جاری کردی ہیں۔جن کے مطابق کسی بھی قسم کے بڑے اجتماعات سے اجتنا ب برتنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ان اجتماعات میں شادی ہالوں میں ہونے والے اجتماعات بھی شامل ہیں۔ سید ناصرحسین شاہ امید ظاہر کی کے جلد ہی صورتحال سے معمول پر آجائیں گے تو ہنگامی صورتحال سے متعلق جاری کی گئیں تمام ہدایات واپس لے لی جائیں گی۔صوبائی وزیر اطلاعات نے بتایا کہ جو جو لوگ کورو نا وائرس سے متاثر ہوئے تھے وہ اب صحتیاب ہوکر اپنے گھروں کو جارہے ہیں۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ تفتان سے سکھر پہچنے والے مسافروں کی مکمل اسکریننگ کی جا رہی ہے جس کے وہاں پر مکمل انتظامات موجود ہیں۔صوبائی وزیر نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ نے اپنا ہیلی کاپٹر بیجھا ہے جس کے ذریعے سکھر میں موجود تفتان سے آئے ہوئے مسافروں کے خون کے نمونے کراچی میں منتقل کئے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ جس کسی شخص میں بھی کرونا وائرس سے متاثر ہونے کی علامات پائی گئیں ان کا علاج کیا جائے گا، باقی دیگر لوگوں کچھ دن وہاں رکھ کر گھر بھیج دیا جائے گا۔ سید ناصر حسین شاہ کہا کہ چونکہ تفتان کی سرحد پر خاطر خواہ انتظامات نہیں ہیں اور لوگوں کو تکالیف کا سامنا بھی کرنا پڑ رہا ہے لہٰذا وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ وفاقی حکومت کو خط لکھ کر درخواست کریں گے کہ تفتان سے آنے والے وہ لوگ جن کا تعلق صوبہ سندھ سے ہے ان کو آنے دیا جائے۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سندھ حکومت صوبے میں مختلف جگہوں پرکئے گئے انتظامات کے تحت ان لوگوں کا معائنہ کر ے گی او ان کو وہاں 14 دن تک رکھ کر تسلی ہونے کے بعد گھر جانے دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ جو ہدایات اسکول، کالجوں، یونیورسٹی سے متعلق جاری کی گئیں ہیں وہی ہدایات مدارس کے طلباء کے لئے بھی کی ہیں۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ ہوائی اڈوں پر غلطی سے مبرا حفاظتی انتظامات وفاقی حکومت کی ذمہ داری ہے۔

مزید : صفحہ اول