گرین ٹرین کا بوڑھا انجن 20 کلومیٹر بعد ہانپ اٹھا ، بوگیاں چھوڑ کر ’فرار‘

گرین ٹرین کا بوڑھا انجن 20 کلومیٹر بعد ہانپ اٹھا ، بوگیاں چھوڑ کر ’فرار‘
گرین ٹرین کا بوڑھا انجن 20 کلومیٹر بعد ہانپ اٹھا ، بوگیاں چھوڑ کر ’فرار‘

  

راولپنڈی ( مانیٹرنگ ڈیسک ) اسلام آباد سے کراچی کے لیے شروع کی گئی گرین ٹرین نے افتتاح کے محض چند لمحوں بعد ہی محکمہ ریلوے کی کارکردگی کاپول کھول دیا اور اس کا ’بوڑھا‘ انجن ’جوان ‘ بوگیوں کو چھوڑ کر فرار ہو گیا جبکہ موقع پر موجود مسافر نئی ٹرین کا یہ حشر دیکھ کر سکتے میں آ گئے۔

نجی ٹی وی چینل ’جاگ‘ کے مطابق  وزیر اعظم نواز شریف کی جانب سے آج خصوصی طور پر گرین ٹرین کا افتتاح کیا گیا اور اس ٹرین کا بوڑھا انجن 20 کلو میٹر بعد ہی ہانپ گیا ۔ نجی ٹی وی کے مطابق بتایا گیا ہے کہ گرین ٹرین کی بوگیاں تو بالکل نئی تھیں لیکن اسے پرانا ا انجن لگا یا گیا جو 20 کلومیٹر چلنے کے بعد بوگیوں کا ساتھ چھوڑ کر خود چلتا بنا ۔ اس واقعہ کے بعد وہاں موجود حکام میں شدید پریشانی کی لہر دوڑ اٹھی اور وہ فوری طور پر واقعہ کی تحقیقات میں لگ گئے ۔

یاد رہے کہ وزیر اعظم کی جانب سے تقریب میں خطاب کے دوران اس ٹرین کی خصوصیات اور یہاں تک کہ ٹرین کے واش رومز کی بھی تعریف کی گئی ۔ نواز شریف نے وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کی تعریفوں کے بھی پل باندھے اور وزارت ریلوے کو اپنی حکومت کی بہترین وزارتوں میں سے ایک قرار دیا گیا ۔

شہریوں کی جانب سے اس واقعہ پر شدید تشویش کا اظہار کیا گیا ہے اور ان کا کہنا تھا کہ اس ٹرین میں وائی فائی کی سہولت کے علاوہ کوئی خاص سہولت نہیں دی گئی ۔انہوں نے مزید کہا کہ نئی بوگیوں کے ساتھ پرانا انجن لگا کر حکومت نے یہ ثابت کر دیا ہے کہ وہ ادارے کو ٹھیک کرنے کی بجائے صرف نمائش پر توجہ دے رہی ہے ۔

مزید : ڈیلی بائیٹس