عراق پربدرالشیعہ کا نظریہ مسلط کرنے کی اجازت نہیں دی جائے‘عراقی نائب صدر

عراق پربدرالشیعہ کا نظریہ مسلط کرنے کی اجازت نہیں دی جائے‘عراقی نائب صدر

  

اربیل (این این آئی)عراق کے نائب صدر اسامہ النجیفی نے کہا ہے کہ ہلال الشیعہ کے بجائے بدرالشیعہ کا نظریہ اختیار کرنے والوں کا احتساب کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے ایران نواز شیعہ گروپ عصائب اھل الحق کے سربراہ قیس خزعلی کیبیان جس میں انہوں نے کہا تھا کہ وہ ہلال الشیعہ کے بجائے بدرا الشیعہ کے نظریے کو فروغ دیں گے‘ کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے غیر ذمہ دارانہ اور جارحانہ قرار دیا۔عراق میں متحدون الائنس کے سربراہ اور نائب صدر اسامہ النجیفی نے کہا کہ عراقی اہل تشیع کے نظریات کو تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ عصائب اھل الحق کے سربراہ قیس خزعلی کا بیان جس میں اس نے ہلال الشیعی کے بجائے بدرالشیعی کا نظریہ اختیار کرنے کا اعلان کیا وہ غیر ذمہ دارانہ ہے۔خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے ایک مذہبی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے قیس خزعلی نے کہا تھا کہ وہ عراقی ہلال الشیعہ کے بجائے بدرالشیعہ کے نظریے کو فروغ دیں گے۔ مبصرین کا کہنا ہے کہ بدرالشیعہ ایران کا عرب ممالک میں توسیع پسندی کا ایک استعارہ بن چکا ہے۔نائب صدر کا کہنا تھا کہ بدرالشیعہ کا نظریہ غیر ذمہ دارانہ جارحیت ہے اور ان کا ملک بیرونی ایجنڈا مسلط کرنے کی کسی صورت میں اجازت نہیں دیگا۔انہوں نے کہا کہ عراق اپنا مذہبی تشخص برقرار رکھے گا۔ بدرالشیعہ نظریات کو عراقی قوم پر مسلط کرنے کی تمام سازشیں ناکام بنائی جائیں گی۔

اسامہ النجیفی کا کہنا تھا کہ بدرالشیعہ کا نظریہ اختیار کرنے والے اپنے فیصلے پر نظرثانی کریں اور خود کو عراقی دھارے سے باہر لے جانے اور کسی دوسرے ملک کے ایجنڈے پر عمل کرنے سے اجتناب کریں۔ ریاست ایسے عناصر کا محاسبہ کرے جو ’بدرالشیعی‘ کا نظریہ اپنائیں اور اسے فروغ دینے کی کوشش کریں۔

مزید :

عالمی منظر -