قبائل کے حقوق کے حصول تک چین سے نہیں بیٹھوں گا : شاہ جی گل آفریدی

قبائل کے حقوق کے حصول تک چین سے نہیں بیٹھوں گا : شاہ جی گل آفریدی

جمرود( نمائندہ خصوصی)جمرود،ممبر قومی اسمبلی الحاج شاہ جی گل آفریدی نے جمرود الیکشن افس میں ھلقہ این اے 43 اقوام کا اظہار تشکر جلسے سے خطاب کرتے ھوئے کہا کہ قبائیلی عوام کے حقوق حاصل کرنے تک چھین سے نہیں بیٹھونگا ۔قبائلی عوام اب بیدار ہوچکے ہیں وہ مزید غلامی کی زندگی بسر کرنے کو تیار نہیں ۔ فاٹااصلاحات بل سے منظور ہونے کے بعد قبائیلی عوام کو اپیل وکیل اور دلیل کا حق حاصل ہوا۔انہوں نے کہا کہ حلقے کے عوام نے ہمارے حق میں بڑے بڑے حمایتی جلسے منعقد کرکے الیکشن سے پہلے ہی ایک قسم کا الیکشن کردیا جس پر میں خیبرایجنسی کے تمام اقوام کا شکر گزار ہوں۔منتخب ہوکر قبائیلی عوام کی باقی ماندہ پسماندگی دور کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کروں گا ۔انھوں نے کہا کہ نورالحق قادری نے علاقے کو دہشت گردوں کے رحم پر چھوڑ کر اسلام آباد کی روشنیوں میں گھوم ھوگئے تھے اور شہیدوں کے لواحقین کیلئے دعائیں گورنر ہاوس میں کررہے تھے اور ریگی للمہ زمین سے پیچھے ہٹنے پر بحریہ ٹاون میں عالی الشان بنگلہ خرید لیا تھا۔ کوکی خیل قوم کے زمینیں میں نے نہیں آپ نے فروخت کئے تھے جس کا ثبوت موجود ہے۔ آپ نے حلقے کے عوام کو اسلام کے نام پر دھوکا دیا اور اب بی بی شرینے گانے بجانوں پر دے رہے ہو۔انھوں نے کہاکہ فاٹا کو دس ہزار ارب یپیکج اکتوبر میں بلدیاتی انتخابات اور خیبر پختونخواہ اسمبلی میں نمائندگی بڑی کامیابیاں ہیں۔ پاکستان و افغانستان میں امن دونوں ملکوں کے مفاد میں ہے اس لیے دونوں ملکوں کے درمیان امن و امان قائم کرنے کے لیے مزاکرات جلد شروع ہوں گے طورخم بارڈر کو ملک کی دیگر بارڈرز کی طرح انٹرنیشنل سطح تک پنچاونگا۔انہوں نے کہا کہ قبائیلی علاقوں میں اصلاحات وقت کی ضرورت ہے جن کو پارلیمنٹ نے منظوری دی جس پر ہم تمام مکاتب فکر کے مشکور ہے اور انشاء اللہ آئین آرٹیکل 247 بہت جلد ختم ھو جائے گا۔انہوں نے کہا کہ قبائیلی علاقوں میں موجودہ نظام کی وجہ سے قبائیلی عوام کو بنیادی حقوق نہیں ملے رہے اس لیے اس نظام کا خاتمہ وقت کی ضرورت تھی جن کا خاتمہ کردیا۔فاٹا اصلاحات بل پارلیمنٹ سے منظوری کے بعد صدر پاکستان نے منظوری دے دی جس سے اب یہ بل باقاعدہ قانون بن گیا ہے جس سے قبائیلی عوام کو بنیادی انسانی حقوق مل جائے گے جبکہ قبائیلیوں کو اپیل وکیل اور دلیل کا حق حاصل ہوا۔انہوں نے کہا کہ جو حقوق زرداری، نواز،عمران کے بچوں کو حاصل ہے وہ حقوق و قبائیلی بچوں کا بھی حق ہے۔جبکہ ریگی للمہ زمین کا مسئلہ کے حل میں پاکستان تحریک انصاف کے صوبائی حکومت اور وزیر اعلی پرویز خٹک رکاوٹ ہے جنہوں نے سخت شرائط بنائے تھے ریگی للمہ زمین کوکی خیل قبیلے کا حق ہے اس حق پر کسی کو ڈاکہ ڈالنے کی اجازت نہیں دے گے۔ انہوں نے فاٹا اصلاحات اس ماہ میں نافذ کردیا جائے گا جبکہ قبائیلی علاقوں میں بلدیاتی انتخابات 2018 میں منعقد کیے جائے گے۔اانہوں نے کہا کہ این ایف سی ایوارڈ میں فاٹا کو تین فیصد حصہ ملنے سے قبائیلی علاقوں کو دس سال میں ایک ہزار ارب روپے ملے گے جس سے قبائیلی علاقوں کی پسماندگی دور ہوجائیگی۔ انہوں نے کہا کہ اپنے حلقہ نیابت میں ریکارڈ ترقیاتی کام مکمل کیے جبکہ باقی میگا پراجیکٹ پر کام جاری ہے جس میں جمرود بجلی گریڈ اسٹیشن،سولر ٹیوب ویلز،رابطہ سڑکیں و پل جبکہ تعلیم و صحت میں اصلاحات کرکے 70 فیصد عوام کے بہبود کے لیے استعمال میں لایا گیا۔جلسہ عام سے ملک نصیر احمد کوکی خیل، ملک عطاء اللہ جان کے فرزند ملکزادہ الیاس کوکی خیل احمد شاہ فریدخیل، قاری سید عالم شینواری ۔عرفان کوکی خیل ۔الفت ملاگوری ۔ نیازامین۔صابر پیروخیل۔ شاہ محمد شینواری ۔ملک یوسف مدوخیل۔جان ولی شینواری اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...