عوام آئندہ الیکشن میں ساتھ ہونے والی نا انصافیوں کا بدلہ لیں گے: غلا م بلور

عوام آئندہ الیکشن میں ساتھ ہونے والی نا انصافیوں کا بدلہ لیں گے: غلا م بلور

پشاور (سٹاف رپورٹر) عوامی نیشنل پارٹی کے سئینر نائب صدر الحاج غلام احمد بلور نے کہا ہے کہ عمران خان کراچی کی عوام کو دس نکات پر بے وقوف بنانے کے بجائے اپنی صوبائی حکومت کی کارکردگی بیان کریں۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے یوسی ٹو، PK-76، NA-31، قائد آباد کاکشال اورخالصہ ٹو لعل دین کالونی میں مختلف شمولیتی اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی ترجمان ہارون بلور، سٹی صدر ملک غلام مصطفی، صوبائی ممبر کونسل الحاج ملک طارق اعوان، حاجی ہدایت اللہ خان اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے غلام احمد بلور کا کہنا تھا کہ عمران خان کا دس نکات پیش کرنا قوم کو بے وقوف بنانے کے مترادف ہے۔اگر ان نکات پرپانچ سالوں میں خیبر پختونخواہ میں عمل درآمد ہوتا تو باقی صوبوں میں پیش کرنے کا جواز سمجھ میں آتا۔انھوں نے کہا کہ یکساں تعلیمی نظام سے پہلے صوبے میں تعلیمی نظام کی حالت قابل رحم ہے جہاں پرائیویٹ سیکٹر کے ساتھ ساتھ سرکاری تعلیمی ادارے بھی زبوں حالی کا شکار ہیں اور گزشتہ سال آنے والے میٹرک کے نتائج اس بات کا واضح ثبوت ہیں۔ہیلتھ کا شعبہ بھی وینٹی لیٹر پر ہے اور آ خری سانسیں لے رہا ہے۔ہسپتالوں کی حالت خراب سے خراب تر ہوتی جا رہی ہے یہ واحد صوبائی حکومت ہے جس میں سئینر اور جوئینر ڈاکٹر ہڑتال پر رہے جبکہ مریضوں کی حالت زار بھی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں۔کرپشن کا خاتمہ بھی ان نکات میں شامل ہے جبکہ پی ٹی آئی کی حکومت میں کرپشن عروج پر رہی اور اسمبلی ممبران اپنے وزیر اعلی پر کرپشن کے الزامات لگاتے رہے۔پختونخواہ میں بلین سونامی ٹری، باب پشاور فلائی اوور اور اب میڑو میں اربوں روپے کی کرپشن کی گئی جسے دنیا جانتی ہے۔انھوں نے کہا کہ جھوٹ بول کے اور یو ٹرن کی سیاست سے سیاسی قد نہیں بڑھایا جا سکتا۔ خیبر پختونخواہ اور پھر پشاور کے شہریوں کے ساتھ جو ناروا سلوک ہواعوام آئندہ الیکشن میں ان کے ساتھ حساب کریں گے اور ووٹ کی طاقت سے اپنے حقوق غصب کرنے والوں کا بوریا بسترا گول کریں گے۔ان کا کہنا تھا فاٹا کا مسئلہ حل طلب ہے اور طویل عرصہ سے حکومت کی جانب سے اسے حل نہیں کیا جا رہا۔انھوں نے کہا کہ آئندہ الیکشن سے پہلے فاٹا کو صوبے میں ضم کر کے صوبائی اسمبلی میں نمائندگی دی جائے اور آئین میں ترمیم کر کے صوبائی کابینہ میں فاٹا کا حصہ مختص کیا جائے فاٹا دہشتگردگی سے بہت متاثر ہوا ہے لہذا اس کی ترقی کے لیے مالی پیکیج کو بھی یقینی بنایا جائے۔انھوں نے واضح کیا کہ فاٹا الگ صوبہ نہیں بن سکتا اس لیے حکومت اسے صوبے میں ضم کرے تاکہ فاٹا کے عوام کو وہ تما سہولیات میسر آ سکیں جو ملک کے دیگر شہروں میں بسنے والے شہریوں کو میسر ہیں۔اس موقع پرپی ٹی آئی سے میاں محمد اسرار، واحد رضا، قومی وطن پارٹی سے آصف خان، جاوید خان، عرفان، سلمان شاہ، شاہ زیب اور دیگر نے اپنے دوستوں اور خاندانوں سمیت عوامی نیشنل پارٹی میں شمولیت اختیار کی۔

مزید : پشاورصفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...