A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 0

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

Error

A PHP Error was encountered

Severity: Notice

Message: Undefined offset: 2

Filename: frontend_ver3/Sanitization.php

Line Number: 1246

میاں چنوں: تین افراد کی گھر میں گھس کر دو بچوں کی ماں سے اجتماعی زیادتی، دو ملزم گرفتار

میاں چنوں: تین افراد کی گھر میں گھس کر دو بچوں کی ماں سے اجتماعی زیادتی، دو ملزم گرفتار

مئی 15, 2018 | 12:16:PM

خانیوال (ویب ڈیسک) تین افراد نے دو بچوں کی ماں کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا، تھانہ چھب کلاں نے مقدمہ درج کرکے دو ملزمان کو گرفتار کرلیا۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

روزنامہ خبریں کے مطابق میاں چنوں کے مشہور قصبہ تھانہ چھب کلاں کے نواحی گاﺅں 81 پندرہ ایل کی رہائشی غریب خاتون زوجہ محمد عارف ڈوگر نے وجھیانوالہ میں صحافیوں کو بتایا کہ میرا خاوند 17 اپریل کو مزدوری کرنے خانیوال گیا ہوا تھا، میں اپنے دو بچوں کے ہمراہ گھر میں اکیلی تھی۔ رات 9 بجے کے قریب گاﺅں ہذا کی رہائشی ساجدہ بی بی اس کا خاوند طارق اپنے دو ساتھیوں یونس اور طیب کے ہمراہ میرے گھر آکر دستک دی، دروازہ نہ کھولنے پر دیوار پھلانگ کر زبردستی میرے گھر آگئے، تشدد کرتے ہوئے نشہ آور دوائی میرے چہرے پر پھینکی جس سے میں بے ہوش ہوگئی۔

تینوں مردوں نے میرے ساتھ زیادتی کی اور مجھے برہنہ حالت میں چھوڑ کر فرار ہوگئے، رات گئے جب میرا خاوند گھر آیاتو اس نے مجھے برہنہ اور بے ہوش دیکھ کر پولیس کو اطلاع دی اور مجھے میاں چنوں سول ہسپتال میں داخل کروادیا گیا۔ میڈیکل رپورٹ پر تھانہ چھب کلاں میں مقدمہ درج کرلیا گیا مگر ملزمان پارٹی مجھے اور میرے خاوند پر پولیس سے ساز باز ہوکر صلح کیلئے دباﺅ ڈال رہے ہیں اور سنگین نتائج کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔

متاثرہ خاتون نے چیف جسٹس پاکستان، وزیراعلیٰ پنجاب اور آر پی او ملتان سے اپیل کی ہے کہ مجھے زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزمان کو سخت سے سخت سزا نہ دی گئی تو میں تھانہ چھب کلاں کے سامنے خود پر پٹرول چھڑک کر خود سوزی کرلوں گی۔تھانہ چھب کلاں کے ایس ایچ او انسپکٹر محمد بخش سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ دو ملزمان طارق اور یونس کو پکڑ لیا ہے جبکہ دو ساجدہ بی بی اور طیب فرار ہیں، ان کی تلاش جاری ہے، بہت جلد ان کو بھی گرفتارکرلیا جائے گا۔

مزیدخبریں