نوجوان لڑکی کو اغوا کرنے کے بعد 2 مردوں کی اس کے ساتھ جنسی زیادتی، لیکن پھر یہ جان بچا کر بھاگ آئی اور آتے آتے ان کی ایسی اہم ترین چیز ساتھ لے آئی کہ دیکھ کر پولیس والے بھی حاضر دماغی کی تعریف کرنے پر مجبور ہوگئے

نوجوان لڑکی کو اغوا کرنے کے بعد 2 مردوں کی اس کے ساتھ جنسی زیادتی، لیکن پھر یہ ...
نوجوان لڑکی کو اغوا کرنے کے بعد 2 مردوں کی اس کے ساتھ جنسی زیادتی، لیکن پھر یہ جان بچا کر بھاگ آئی اور آتے آتے ان کی ایسی اہم ترین چیز ساتھ لے آئی کہ دیکھ کر پولیس والے بھی حاضر دماغی کی تعریف کرنے پر مجبور ہوگئے

  

نئی دلی(نیوز ڈیسک) بھارت میں عصمت دری کے درجنوں واقعات روزانہ پیش آتے ہیں لیکن گزشتہ دنوں ناگپور شہر میں پیش آنے والا ایک واقعہ اس حوالے سے منفرد ہے کہ ظلم کا نشانہ بننے والی لڑکی نے حاضر دماغی کا مظاہرہ کرتے ہوئے جنسی درندوں کو کمرے میں بند کر دیا اور ان کے موبائل فون لے کر پولیس کے پاس پہنچ گئی۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق 18 سالہ لڑکی فرسٹ ائیر کی طالبہ ہے اور کالج کے بعد ایک بیوٹی پارلر سے تربیت بھی حاصل کر رہی ہے۔ ہفتے کے روز جب وہ بیوٹی پارلر جا رہی تھی تو دو اوباش افراد نے اسے اغواءکر لیا۔ وہ اسے ایک خالی مکان میں لے گئے جہاں شراب پی کر اسے زیادتی کا نشانہ بناتے رہے۔ کثرت شراب نوشی کی وجہ سے بالآخر دونوں بے ہوش ہو گئے جس پر لڑکی نے موقع غنیمت جانا اور کمرے کو باہر سے کنڈی لگا کر فرار ہو گئی۔ وہ ملزمان کے موبائل فون ساتھ لے گئی اور پولیس کے پاس جا کر سارا ماجرا بیان کیا۔ پولیس نے موبائل فونز کی مدد سے ناصرف ملزمان کی شناخت کر لی بلکہ ان کی لوکیشن کا بھی فوری اندازہ لگا لیا۔ ملزمان کی شناخت شیخ سلام اور شری رام شری باس کے نام سے کی گئی ہے۔ دونوں عادی مجرم ہیں اور اغواءو عصمت دری کے کئی مقدمات میں پہلے ہی مطلوب تھے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /بین الاقوامی