پاکستان نے امریکی سفارتخانے کے ساتھ اہم معاہدہ ختم کر دیا

پاکستان نے امریکی سفارتخانے کے ساتھ اہم معاہدہ ختم کر دیا
پاکستان نے امریکی سفارتخانے کے ساتھ اہم معاہدہ ختم کر دیا

  

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)وفاقی وزارت داخلہ کے حکام نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کوبتایاکہ امریکی سفارت خانے کے ساتھ فائرنگ رینج کے حوالے سے ہونیوالے معاہدے کوختم کردیاگیا،فائرنگ رینج سفارتخانے میں نہیں پویس کے فائرنگ رینج کواپ گریڈکرناتھا،چیئرمین کمیٹی نے کابینہ اوروزارت خارجہ سے اجازت لیے بغیرفائرنگ رینج کامعائدہ کرنے پر برہمی کااظہارکرتے ہوئے وزارت کو معاہدے کی کاپی اور معاہدہ کرنے والوں کی معلومات کمیٹی کودینے کی ہدایت کردی۔

کمیٹی کا بلوچستان میں دہشتگرد کارروائیوں میں اضافے پراظہارتشویش، نیشنل ایکشن پلان کا از سرنو جائزہ لینے کافیصلہ کرلیا،چین کا کوئی عیسائی باشندہ پاکستان آکر شادی نہیں کر سکتا جب تک چین کے پادری سے سرٹیفکیٹ حاصل نہ کر رکھا ہو۔حکام نے کمیٹی کوبتایاکہ افصل کوہستانی کوقتل کرنے والے تمام ملزمان کوگرفتارکرلیا۔سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینیٹر رحمان ملک کی زیر صدارت منعقد ہوا۔ چیئرمین کمیٹی سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ چیف کمشنر اسلام آباد اور آئی جی پولیس اسلام آباد سے امریکی فائر رینج پر بریفنگ مانگی تھی۔پولیس بتائے کہ امریکی فائر رینج بنانے کیلئے اجازت نامہ کس سے لیا تھا؟۔کسی بھی ملک کو پاکستان کے قوانین کے منافی کسی بھی کام یا چیز کی اجازت نہیں دینگے۔

سپیشل سیکرٹری داخلہ نے قائمہ کمیٹی کو بتایا کہ جب معاملہ کمیٹی میں اٹھایا گیا تو وزارت داخلہ نے معاملے کا جائزہ لیا۔ فائرنگ رینج کے معاملے کو واپس لے لیا گیا ہے اب وہاں کوئی فائرنگ رینج نہیں بن رہا۔قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں بلوچستان میں حالیہ دہشت گردی کے واقعات کی شدید الفاظ میں مذمت اور شہدا کی مغفرت کی دعاکی گئی۔ چیئرمین کمیٹی نے کہاکہ تین دنوں میں بلوچستان میں ہشتگردی کے2حملے ہوئے جس میں متعدد افراد شہید ہوئے۔انہوں نے کہا کہ حکومت اس نئی لہر کو نظرانداز نہ کرے اور نیشنل ایکشن پلان کا از سرِنو جائزہ لیا جائے گا۔چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ پاکستانی لڑکیوں کی چینی باشندوں سے شادیوں کے معاملے کو بھی چین کے سفارتخانے نے اٹھایا تھا۔انہوں نے کہا کہ چین کا کوئی عیسائی باشندہ پاکستان آکر شادی نہیں کر سکتا جب تک کہ چین کے پادری سے سریٹفکیٹ حاصل نہ کر رکھا ہو۔

ایف آئی اے سے اس معاملے پر تفصیلی بریفنگ حاصل کی جائے گی۔ چیئرمین کمیٹی نے پاکستانی میڈیا سے سفارش کی کہ یہ حساس نوعیت کا معاملہ ہے چین کے حوالے سے خبروں میں خیال رکھا جائے اور دشمن کی سازش کو مل کر ناکام کریں۔ سینیٹر رحمان ملک نے کہا کہ لاپتہ افراد کے حوالے سے ملک کی تمام سیاسی جماعتیں مسئلہ کے حل کی خواہاں ہیں اور متاثرین کے ساتھ کھڑی ہیں۔ ہزاروں لاپتہ افراد میں سے صرف 346 رہ گئے ہیں۔ قائمہ کمیٹی نے گوادر پی سی ہوٹل میں دہشت گردی کے واقعے اور بلوچستان کی اہم عمارتوں کی سکیورٹی کیلئے اٹھائے گئے اقدامات کی رپورٹ وزارت داخلہ سے طلب کر لی۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد