چائلڈ پورنوگرافی کیس، ملزم سعادت امین کی ضمانت منظور

  چائلڈ پورنوگرافی کیس، ملزم سعادت امین کی ضمانت منظور

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ کے مسٹرجسٹس فاروق حیدرنے چائلڈ پورنوگرافی کیس میں ٹرائل کورٹ کی جانب سے دی جانے والی سزا معطل کرکے ملزم سعادت امین کی ضمانت منظور کرلی،فاضل جج نے ملزم کو2لاکھ روپے کے مچلکوں کے عوض رہاکرنے کا حکم دے دیا۔درخواست گزار کی طرف سے سزاکے خلاف دائر اپیل میں رانا ندیم احمد ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ نارویجن پولیس لائزن آفیسر رائے لینڈوت کی درخواست پر اسے مقدمہ میں بے بنیاد ملوث کیا گیا،اس کے موکل پر کمسن بچوں کی قابل اعتراض تصاویر اور ویڈیوز نارویجن شہری کو بھجوانے کا الزام بے بنیاد ہے، ٹرائل کورٹ نے ناکافی شواہد کے باوجود درخواست گزار کو 7 برس قیدکی سزا سنائی، وہ2017ء سے جیل میں قید ہے، 2018ء سے سزا کے خلاف ہائیکورٹ میں دائر اپیل پر سماعت ہی نہیں کی گئی، مجرم اپنی 7 سال میں سے 4 برس قید اپیل کے حتمی فیصلے سے پہلے ہی کاٹ چکا ہے،ایف آئی اے کے پراسیکیوٹرنے عدالت کو بتایا کہ مجرم سعادت امین کے خلاف ٹھوس شواہد موجود ہیں، ٹرائل کورٹ نے حقائق کے عین مطابق اور ثبوتوں کی روشنی میں سزا سنائی ہے، سزا کے خلاف اپیل مسترد کی جائے، عدالت نے دلائل سننے کے بعد ملزم سعادت امین کو ٹرائل کورٹ سے ملنے والی سزا معطل کرتے ہوئے اسے 2لاکھ روپے کے مچلکوں کے عوض رہا کرنے کاحکم دے دیاہے۔

ضمانت منظور

مزید :

صفحہ آخر -