لاک ڈاؤن مجبوری‘احتیاطی تدابیر کیساتھ تھیٹرز کھولے جائیں: پاکستان فورم

    لاک ڈاؤن مجبوری‘احتیاطی تدابیر کیساتھ تھیٹرز کھولے جائیں: پاکستان فورم

  

ملتان (فورم رپورٹ: اعجازمرتضیٰ)تھیٹرز کی بندش سے دیہاڑی دار فنکارمعاشی بدحالی کا شکار ہوگئے‘سماجی فاصلے سمیت مکمل احتیاطی تدابیر کے ساتھ تھیٹرز کھولے جائیں‘کرونا وائرس کی وبا نے دنیا بھر میں تباہی مچادی ہے‘مشکل حالات میں سوچ سمجھ کر فیصلے کرنا ہوں گے(بقیہ نمبر32صفحہ7پر)

‘حکومتی اقدامات فنکاروں سمیت تمام شہریوں کی بہتری اور حفاظت کے لئے ہیں‘ان خیالات کا اظہار”تھیٹرز کی بندش.....فنکاروں کی مشکلات“ کے عنوان سے روزنامہ پاکستان کے ٹیلیفونک فورم میں شوبز سے وابستہ شخصیات اور آرٹس کونسلز کے اعلیٰ افسران نے اظہار خیال کرتے ہوئے کیا۔ پاکستان آرٹسٹ ایسوسی ایشن ملتان کے جیوری چیئرمین وبابر تھیٹر کے سینئر ہدایتکار یوسف کامران نے کہا کہ تھیٹرز کی بندش سے غریب فنکاروں کے گھروں کے چولہے بجھ چکے ہیں اور وہ شدید پریشان ہیں کیونکہ ان کے گھروں میں فاقوں تک نوبت پہنچ گئی ہے‘ہمیں احساس ہے کہ کرونا وائرس کے مسئلے کے باعث حالات کس قدر گھمبیر ہوچکے ہیں مگر 2ماہ ہوچکے ہیں‘ لاک ڈاؤن میں بیروزگار فنکاروں کے گھروں میں بھوک ناچ رہی ہے‘ہمارا حکومت سے مطالبہ ہے کہ سماجی فاصلے سمیت تمام احتیاطی تدابیر کے ساتھ عید الفطر سے تھیٹرز کھول دئیے جائیں ہم احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے ہر سیٹ کے ساتھ ایک سیٹ ختم کرکے فاصلہ دیں گے‘ سینیٹائزرگیٹ لگانے کو بھی تیار ہیں‘پاکستان آرٹسٹ ایسوسی ایشن ملتان کے سینئر نائب صدر و سنگم تھیٹر کے سینئرہدایتکاراعجاز چندا نے کہا کہ اس وقت مارکیٹیں کھل چکی ہیں‘ دفاتر کھل چکے ہیں‘ سبزی منڈی‘ غلہ منڈی اور مارکیٹوں میں لوگوں کا ہجوم ہے جہاں کھوے سے کھوا چھل رہا ہے‘نادراسنٹرز‘ احساس پروگرام سنٹرز‘ بینکوں‘ یوٹیلٹی سٹورزپر بھی رش ہے اور لوگوں کے درمیان کوئی سماجی فاصلہ نہیں ہے جو ایک دوسرے کے ساتھ چپکے ہوئے ہیں‘ حکومت کو اس طرف توجہ دینی چاہئیے۔اگر حکومت تھیٹرز کھولنے کی اجازت دے تو ہم تمام تر احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کو تیا رہیں۔اگر تھیٹرز نہ کھلے تو بے روزگار فنکار کرونا وائرس نہیں تو بھوک سے ضرور مرجائیں گے۔پاکستان آرٹسٹ ایسوسی ایشن ملتان کی سابق جنرل سیکرٹری فوزیہ شاہین نے کہا کہ اس وقت بے روزگار فنکاروں کے گھروں میں بھوک کے ڈیرے ہیں‘دولت والوں کو کیا خبر اور انہیں کیا احساس کہ غریبوں کے دن کیسے گزررہے ہیں اور وہ کس قدر کسمپرسی کی حالت میں زندگی کے دن پورے کر رہے ہیں اور ان کے گھروں میں بھوک نے کیا تماشہ لگا رکھا ہے‘ محض چند مخیر افراد غریبوں کی امداد کررہے ہیں لیکن وہ بھی ایساکہاں تک کریں گے ‘اس لئے حکومت سے گزارش ہے کہ جس طرح مارکیٹیں اورمختلف ادارے کھول دئیے ہیں تو سماجی فاصلے سمیت تمام احتیاطی تدابیر کے ساتھ عیدالفطر سے تھیٹرز کھولنے کی اجازت بھی دی جائے۔فلم فیکلٹی پاکستان (ایف ایف پی)کے صدر و ہدایتکارسید کامران حیدر شاہ گیلانی نے کہاکہ فنکاروں اور ان کے بچوں کی بھوک سے حالت دیکھی نہیں جاتی‘مہنگائی کایہ عالم ہے کہ اس وقت ایک عام گھر کا ماہانہ کم سے کم اوسط خرچ بھی 30ہزارروپے ہے‘لاک ڈاؤن اور تھیٹرز کی بندش سے فنکاربدترین مالی بحران کا شکار ہوچکے ہیں اور اب تو دکانداروں‘ رشتہ داروں اور واقف کاروں نے بھی اپنے ہاتھ کھڑے کردئیے ہیں اور مزید ادھار دینے سے انکار کردیا ہے‘ ہماری حکومت سے گزارش ہے کہ سیٹوں میں فاصلہ‘سینیٹائزر گیٹ‘گلوز‘ ماسک اور ہینڈ سینیٹائزرکے استعمال کو لازمی قرار دے کر تھیٹرزعیدالفطر سے کھول دئیے جائیں۔ڈائریکٹر ملتان آرٹس کونسل طاہر محمود چوہدری اور ڈائریکٹر ڈیرہ غازی خان آرٹس کونسل محمد سلیم قیصرنے کہا کہ کرونا وائر س کی وبا نے پوری دنیا میں تباہی مچا دی ہے‘ پاکستان میں بھی گھمبیر صورتحال ہے‘ اس صورتحال میں عوا م کی جانوں کو محفوظ رکھنے کے لئے حکومت کو سخت فیصلے کرنا پڑے ہیں‘ حکومت کو بھی اس بات کا شدت سے احساس ہے کہ بڑی تعداد میں دیگر شہریوں کی طرح فنکار بھی بے روزگار ہوچکے ہیں‘ جونہی صورتحال بہتر ہوئی تو حکومت تھیٹرز کھولنے کا بھی اعلان کردے گی‘ حکومت فنکاروں کی فلاح وبہبود کے لئے گراں قدر اقدامات کر رہی ہے اور سلسلے میں کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کیاجارہا‘حکومت نے لاک ڈاؤن خوشی سے نہیں بلکہ مجبوری کے عالم میں 100فیصد عوام کے مفاد میں کیا ہے۔ لاک ڈاؤن کی صورتحال میں حکومت نے آرٹس کونسلوں کے ذریعے بے روزگار فنکاروں کے لئے مالی امداد کا بندوبست کیاجبکہ آرٹس کونسلوں کے زیر اہتمام مستحق فنکاروں میں راشن بھی تقسیم کیا گیا ہے۔حکومت کے تمام فیصلے عوام کے مفاد میں ہیں‘ہمیں اللہ تعالی ٰ پر یقین ہے جو غفور ورحیم ہے‘ کرونا وائرس کی وبا سے جلد نجات مل جائے گی اور لاک ڈاؤن ختم ہوجائے گا۔

پاکستان فورم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -