بھارت کی بنیادی پالیسی ”مسلمان کو جینے نہ دو“ چیف جسٹس (ر) میاں محبوب احمد

    بھارت کی بنیادی پالیسی ”مسلمان کو جینے نہ دو“ چیف جسٹس (ر) میاں محبوب ...

  

لاہور (آن لائن) بھارت کی بنیادی پالیسی ”مسلمان کو جینے نہ دو“ ہے۔ کورونا ایک وباء ہے لیکن اس کا ذمہ دار بھی مسلمانوں کو ٹھہرا کر ان پر ظلم وستم ڈھا ئے جارہے ہیں۔ کورونا وباء کی آڑ میں بھارت میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی منظم مہم چلائی جا رہی ہے۔عالمی برادری اس صورتحال کا نوٹس لے۔ ان خیالات کا اظہارسابق چیف جسٹس وفاقی شرعی عدا لت و چیئرمین تحریک پاکستان ورکرز ٹرسٹ چیف جسٹس (ر)(بقیہ نمبر33صفحہ7پر)

میاں محبوب احمد نے ”کورونا وباء، بھارت کی مسلم دشمنی“ کے عنوان سے منعقدہ آن لائن فکری نشست کے دوران کیا۔ تقریب کی کارروائی نظریہئ پاکستان ٹرسٹ کے فیس بک پیج اور یو ٹیوب چینل پر دکھائی گئی۔ تقریب کاباقاعدہ آغاز تلاوتِ کلامِ پاک‘ نعت رسول مقبولؐ اور قومی ترانہ سے ہوا۔ حافظ محمد داؤد نقشبندی نے تلاوتِ کلامِ پاک کی سعادت حاصل کی جبکہ الحاج اختر حسین قریشی نے بارگاہِ رسالت مآبؐ میں نذرانہئ عقیدت پیش کیا۔ آن لائن تقریب کی نظامت کے فرائض نظریہئ پاکستان ٹرسٹ کے سیکرٹری شاہد رشید نے انجام دیئے۔چیف جسٹس (ر) میاں محبوب احمد نے کہا بین الاقوامی تعلقات میں تضاد بھی ہوتا ہے اور ایکدوسرے کیخلاف بات بھی کی جاتی ہے لیکن ہماری بدقسمتی یہ ہے ہمارا ہمسایہ بھارت یہ سمجھتا ہے کہ کوئی بھی بات ہو اس میں ہر طرح سے پاکستان پر یلغار کی جائے تاکہ بین الاقوامی سطح پر اسے بدنام کیا جا سکے۔اب ہم اسے بدقسمتی ہی کہہ سکتے ہیں کہ ہمارا ہمسایہ انسانیت کی اتھاہ گہرائیوں سے باہر نکلنے کو تیار نہیں۔ہم نے ہر ممکن کوشش کی کہ جو بھی ہمسائیگی کا حق ہے اس کو ادا کرتے رہیں لیکن لگتا ہے ان کی بنیادی پالیسی یہ ہے کہ مسلمان کو جینے نہ دو۔اللہ کا اپنا ایک نظام ہے جو انصاف پر مبنی ہے۔وہ خودایسا انتظام کرے گا کہ انڈیا کی یہ مذموم حرکت زیاد ہ دیر نہیں چل سکے گی۔انسانیت ایک ایسا پہلو ہے جس پر مذہب کو فوقیت نہیں دی جا سکتی۔اگر ایسا ہو تو اس سے ممالک میں دشمنیاں بڑھیں اور خرابیاں بھی پیدا ہوں گی۔بہتر یہ ہے کہ انسان کو پہلے انسان بننا چاہئے اور اگر وہ انسان بن جائے تو ہر ایک کا مذہب الگ الگ ہوتا ہے وہ ایک دائرے میں رہے گا۔اگر انسانیت کو ایک طرف کر دیا جائے تو انسان انسان ہی نہیں رہتا۔مذہب تو انسانیت ہی سکھاتا ہے۔ہر قوم اپنے مذہب پر ضرور قائم رہے لیکن اس کو اتنا گڈ مڈ نہ کریں کہ مذہب کو پہلے لے آئیں اور انسانیت کو ایک طرف رکھ دیں۔تقریب سے خطاب میں صدرپی ٹی آئی پنجاب اعجاز چودھری نے کہا کورونا وباء کے باعث بھارت میں مسلمانوں کی زندگی نہایت تلخ ہو کر رہ گئی ہے۔ نہ صرف بھارتی حکمران بلکہ عمومی طور پر ہندوتوا کے غلام اور آر ایس ایس کے غنڈوں نے مسلمانوں پر عرصہ ئ حیات تنگ کر دیا ہے۔ نظریہئ پاکستان اس بات کی وضاحت تھی کہ اس خطہ میں مسلمان اور ہندو دو الگ الگ قومیں ہیں، اسی فلسفہ پر اس وقت لاکھوں لوگوں نے قربانیاں دیں،ہجرت کی۔ اس وقت کوئی عالمی ضمیر بھارت کوچیلنج نہیں کر رہا بلکہ سوا ارب کی منڈی سمجھ کر اس کے ظلم سے صرف نظر کر رہے ہیں۔یہ انتہاپسندانہ سوچ نئی نہیں۔گزشتہ برس اگست میں مقبوضہ کشمیر میں کرفیو لگا کر اسی لاکھ مسلمانوں کو ایک پنجرے میں بند کر کے ان کی زندگی کو تباہ و برباد کیا گیا۔اس دوران عالمی برادری خاموش تماشائی بنی رہی۔ جن لوگوں کو گزشتہ 72برسوں میں نظریہئ پاکستان کی سمجھ نہیں لگ سکی نریندر مودی نے مسلمانوں پر ظلم وستم کی انتہا کر کے ہمارے ہاں موجود ان دانش فروشوں کا منہ بند کر دیاجو دونوں قوموں کو ایک ہی سمجھتے ہیں۔ممتاز دانشور اور صحافی پروفیسر عطاء الرحمن نے کہا کہ کرونا وائرس کی وباء بھارت میں جب پھیلی تو اس کا ذمہ دار ان کے تبلیغی اجتماع کو قرار دیا گیا۔جو ایک نہایت غیر انصافی پر مشتمل اور نسل پرستانہ رویہ تھا۔یہاں تک کہ مسلمانوں کی دکانوں سے خریدوفروخت بند کر دی گئی۔بیمار مسلمانوں کیلئے ہسپتالوں کے دروازے بند کر دیے گئے۔رہنما (ن) لیگ و سابق وزیر صحت پنجاب خواجہ سلمان رفیق نے کہا بھارت میں انتہا پسند سوچ رکھنے والے ہندوؤں نے کبھی بھی مسلمانوں کو معاف نہیں کیا۔ قیام پاکستان سے آج تک بھارت نے مسلمانوں اور پاکستان کو نقصان پہنچانے کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیا۔ تاریخ کے اس نازک موڑ پر پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کو اتحاد، تنظیم، فکر اور جدوجہد کی ضرورت ہے اور ہم سب کی صرف ایک منزل ہونی چاہئے عظیم تر پاکستان۔سجادہ نشین آستانہ عالیہ سندر شریف پیر سید محمد حبیب عرفانی نے کہا انڈیا واحد ملک ہے جو کورونا وباء کو بھی اسلام اور مسلم دشمنی کیلئے استعمال کر رہا ہے۔ وباء کا کوئی مذہب نہیں ہوتا لیکن انڈیا میں مودی سرکار نے اس بات کو بھی مسلمانوں کیخلاف استعمال کیا۔مسلم ممالک اس ضمن میں آگے بڑھیں تاکہ مسلمانوں کی زندگی کا تحفظ کیا جا سکے۔صدر پی پی پی لاہور عزیز الرحمن چن نے کہا پی پی پی نے ہمیشہ ظلم کیخلاف آواز بلند کی۔بھارت میں مودی سرکار مسلمانوں کے اوپر جو مظالم ڈھا رہی ہے ہم اس کی پرزور مذمت کرتے ہیں۔ شاہد رشید نے کہابھار ت میں ہندو توا کے زیر اثر مسلمانوں کو اس وباء کا ذمہ دار قرار دیکر ریاستی جبروتشدد کیا جا رہا ہے۔عالمی برادر ی اس صورتحال کا نوٹس لے۔

میاں محبوب احمد

مزید :

ملتان صفحہ آخر -