قرنطینہ میں موجود شخص نےگھر جاکر بیوی کا نازک عضو کیوں کاٹ ڈالا؟

قرنطینہ میں موجود شخص نےگھر جاکر بیوی کا نازک عضو کیوں کاٹ ڈالا؟
قرنطینہ میں موجود شخص نےگھر جاکر بیوی کا نازک عضو کیوں کاٹ ڈالا؟

  

نئی دہلی(ڈیلی پاکستان آن لائن)بیوی پر بدچلنی کا شبہ، گزرا توقرنطینہ میں موجود شوہرنےوہاں سے فرار ہوکر بیوی کے جسم کا اہم ترین حصہ کاٹ ڈالا۔بھارتی اخبار ٹائمز آف انڈیا کی ایک رپورٹ کے مطابق بھارتی ریاست چھتیس گڑھ کے شہر رائے پورمیں  قرنطینہ سینٹر میں رہنے والے ایک شخص نے بیوی کے بدچلن ہونے کے شک پر سینٹر سے بھاگ کر اپنی بیوی کا ہاتھ کاٹ دیا۔

رپورٹ کے مطابق ملزم  کو جب شک گزرا کہ اس کی بیوی کا کسی کے ساتھ افیئر چل رہا ہے تو وہ قرنطینہ سینٹر سے فرار ہوگیا۔26 سالہ نوجوان للت کوروا فرار ہوکر گھر پہنچے تو انہوں نے بیوی کو کسی دوسرے شخص کے ساتھ فون پر بات کرتے ہوئے دیکھا تو  طیش میں آگئے اور انہوں نے بیوی کا ہاتھ ہی کاٹ دیا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ واقعے کے بعد اہل محلہ نے خاتون کو ہسپتال پہنچایا مگر ان کے ہاتھ کو جوڑا نہ جا سکا اور پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے ان کے شوہر کو گرفتار کرلیا۔

گرفتار شوہر نے پولیس کو بتایا کہ وہ جب سے قرنطینہ سینٹر گئے تھے تب سے ان کی بیوی کا فون ہمیشہ مصروف رہتا تھا، جس پر انہیں اپنی بیوی کے کردار میں شک ہوا۔

ملزم کے مطابق بیوی کے کردار پر شک ہونے کے بعد ہی وہ قرنطینہ سینٹر سے فرار ہوئے اور جب وہ گھر پہنچے تو اپنی بیوی پیار بائی کو کسی دوسرے شخص کے ساتھ فون پر باتیں کرتے ہوئے دیکھا تو وہ غصے میں آگئے او انہوں نے ان کا وہی ہاٹھ کاٹ دیا جس میں انہوں نے فون کو پکڑا تھا۔پولیس نے ملزم کو گرفتار کرکے مزید کارروائی شروع کردی جب کہ خاتون کے ہاتھ کو جوڑا نہ جا سکا، تاہم ان کی حالت خطرے سے باہر ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -بین الاقوامی -کورونا وائرس -