عمران خان جتنی غلاظت اگلیں گے، اتناہمیں فائدہ ہوگا،وفاقی وزراء 

    عمران خان جتنی غلاظت اگلیں گے، اتناہمیں فائدہ ہوگا،وفاقی وزراء 

  

  اسلام آباد (نیوزایجنسیاں)وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات مریم اورنگزیب نے کہا ہے نالائق، نااہل، چور، جھوٹے، کرپٹ، کارٹلز اور مافیا کاٹولہ چار سال اقتدار سے چمٹا رہا، انہیں عوام سے کوئی سروکار نہیں،چار سال تک لوٹ مار کرنیوالا ٹولہ نااہل ٹولہ سوالات ان سے کر رہا ہے جن کے پاس چار ہفتوں سے حکومت آئی ہے، سیالکوٹ جلسے کیلئے خیبر پختونخوا کے سرکاری ہیلی کاپٹر کو استعمال کیا جا رہا ہے، ہیلی کاپٹر، بی آر ٹی، پشاور، مالم جبہ سمیت تمام کیسز پاکستان کے عوام کو یاد ہیں، تحریک انصاف کو کسی نے بھی جلسہ کرنے سے نہیں روکا، چرچ گراؤنڈ میں مسیحی برادری کی عبادت گاہ ہے، جلسہ نہیں کیا جا سکتا، مسیحی برادری کے حقوق کا تحفظ حکومت کی ذمہ داری ہے،ہم فاشسٹ ہیں نہ آپ کی تقریروں سے ڈرتے ہیں، جتنی آپ غلاظت اگلیں گے اس کا فائدہ ہمیں ہی ہوگا، کاغذ لہرا کر سازش کا بیانیہ اپنا کر اپنی کارکردگی، لوٹ مار سے عوام کی توجہ نہیں ہٹا سکتے، ریاست مدینہ کا نام استعمال کر کے اور اپوزیشن کو سزائے موت کی چکیوں میں ڈال کر سیاست کرنا ان کا چار سال وطیرہ رہا ہے۔ہفتہ کو یہاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا اقتدار سے جانے کے بعد تین سے 12 اپریل تک انہوں نے آئین شکنی کی،آئین شکنی اور پارلیمان پر حملے کا واحد مقصد یہ تھا کہ اقتدار سے چمٹے رہیں، چاہے مہنگائی ہو یا معاشی تباہی، وزیر اطلاعا ت و نشریات نے سوال کیا کہ عمران نیازی خیبر پختونخوا کا سرکاری ہیلی کاپٹر کس حیثیت سے استعمال کر رہے ہیں؟، یہ وہی ہیلی کاپٹر کیس ہے جس کو دبانے اور سوال نہ پوچھنے کیلئے انہوں نے خیبر پختونخوا میں احتساب کمیشن کو تالہ لگایا۔ وفاقی وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا ہے عمران نیازی پہلے توہین مسجد نبویؐ کا مرتکب ہوا اور اب گرجاگھرکوجلسہ گاہ بنانے کی کوشش کرکے مسیحی برادری کے مذہبی جذبات کواکسایا۔سیالکوٹ میں پی ٹی آئی کاگرجا گھر کی جگہ جلسہ کرنے پروزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے اپنے بیان میں کہا خونیں مارچ والوں نے آج سیالکوٹ میں گرجا گھر پر حملہ کیا۔ انہوں نے کہاریاست مدینہ کا نام لیکر اپنی سیاسی دکان چمکانے والا عمران نیازی ملک میں مذہبی انتشار پھیلا رہا ہے۔ عمران نیازی ریاست پاکستان کیلئے خطرہ بن چکا ہے، اس کے شر سے کوئی ادارہ، مسجد اورنہ ہی کوئی گرجا گھرمحفوظ ہے۔ ریاست ہر صورت اپنی اقلیتوں کا تحفظ کریگی اور انکے مذہبی مقامات کو سیاسی مقاصد کیلئے استعما ل نہیں ہونے دیگی۔ چرچ کی جگہ کو سیاسی جماعت کے جلسہ گاہ کی اجازت نہ دینے کے مسیحی برادری کے فیصلے کو ریاستی تحفظ دینا قانونی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ریاست پاکستان کسی بھی جماعت کو دھونس و زبردستی سے ملک میں ملوکیت نافذ کرنے کی ہر گز اجازت نہیں دے سکتی۔انہوں نے عمران نیازی کو خبردار کرتے ہوئے کہا ملک کے کسی بھی حصے میں نقص امن پیدا کرنے کی صورت میں قانون اپنا راستہ خود بنائیگا۔وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہاہے کہ پی ٹی آئی سیالکوٹ میں مسیحی چرچ کی پراپرٹی پہ بغیر اجازت کے جلسہ کرنا چاہتی تھی، عدالت نے بھی روکا ہے،جلسہ کرنابنیادی جمہوری حق ہے اور اسمیں رکاوٹ ڈالناہماراشیوہ نہیں،ہم اپنے مخالفین کے حقوق کے تحفظ کے بھی حامی ہیں۔اپنے بیان میں انہوں نے کہاکہ سیالکوٹ میں مسیحی چرچ کی پراپرٹی پہ بغیر اجازت کے جلسہ کرناجبکہ عدالت نے بھی روکا ہو تو کسی اور جگہ جلسہ ہوسکتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ کا قطعی طور پہ اسمیں کوئی رول نہیں،جلسہ کرنابنیادی جمہوری حق ہے اور اسمیں رکاوٹ ڈالناہماراشیوہ نہیں،ہم اپنے مخالفین کے حقوق کے تحفظ کے بھی حامی ہیں۔وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ عمران خان کی جانب سے قتل کی سازش کی بات پر یقین نہیں کرتا ہے، یہ شعبدہ بازی ہے،عمران خان ایسی باتیں کررہے ہیں جن سے ان کے ذہنی توازن پر شک ہوتا ہے،جب حکمران تھے تو تب کیوں نہیں بولے، یہ ذہنی طورپرپہلے سے بھی بد تر ہوگئے ہیں۔ سابق وزیر اعظم عمران خان کے بیان پررد عمل کا اظہار کرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہاکہ مجھے یہ وینٹی لیٹر کہہ رہے ہیں کوئی بات نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ میں نے پاکستان کی معاشی صورتحال پر بات کی تھی، ان کی دوائیوں، چینی اور گند م میں کرپشن ہے،ہمارا ملک کا جو حال انہوں نے کیا ہے وہ آپ کے سامنے ہیں اور اس صورتحال کو مد نظر رکھتے ہوئے وینٹی لیٹر کا نام لیا تھا انہوں نے کہاکہ ایسی باتیں کررہے ہیں جن سے ذہنی توازن پر شک ہوتا ہے، ہم سیاسی لوگ ہیں۔انہوں نے کہاکہ جس گراؤنڈ میں جا کر یہ جلسہ کررہے ہیں ان کا سائز دیکھیں، پہلے کرسچن کمیونٹی کے ساتھ جھگڑا کیا۔ انہوں نے کہاکہ عمران خان ایسی باتیں کررہے ہیں جن کا وجود نہیں ہے، کہتے ہیں مجھے مارنے کی سازش ہو رہی ہے، کبھی کہتے ہیں جوبائیڈ ن نے میرے خلاف سازش کی، امریکہ نے سازش کی، میں نے نمبر بند کر دیئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ اگر ان کی ہاں میں ہاں ملائی جائے اور ان کی مدد کی جائے تو سب کچھ اچھا ہے اور اگر کوئی قانون کے مطابق بات کرے تو ایسی زبان استعمال کر تے ہیں جو نہیں کر نی چاہیے۔انہوں نے کہاکہ یہ کب تک ان کا رونا دھونا چلے گا۔ قتل کی سازش کے حوالے سے سوال پر انہوں نے کہاکہ یہ شعبہ بازی ہے، دنیا بھر میں ہوتا ہے جب سیاستدان کمزور ہوتے ہیں تو کہتے ہیں میری جان کو خطرہ ہے۔ انہوں نے کہاکہ جب حکمران تھے تو تب کیوں نہیں بولے۔انہوں نے کہاکہ یہ ذہنی طورپر پہلے سے بھی بد تر ہوگئے ہیں۔

وفاقی وزراء 

مزید :

صفحہ اول -